Zafar Iqbal

Zafar Iqbal

ظفر اقبال‎

Zafar Iqbal
Zafar Iqbal

27 SEPTEMBER 1932

Zafar Iqbal Is An Pakistani Poet Born On 27 September 1932 In Bahawalnagar Punjab.He Is Best Urdu Poet He Was Awarded Hilal_E_Imtiaz By President Mamnoon Hussain For His Brilliant Poetry & Pride Of Performance In 1999 Awarded By President Muhammad Rafiq Tarar.He Was Also A Journalist Writer Attorney

 

Zafar Iqbal poetry

 

zindagi toh kabhi nahi aai

Zafar Iqbal poetry
Zafar Iqbal poetry

zindagi toh kabhi nahi aai
Maut Aai zara zara kar ke

 

Yahan Kisi Ko Bhi Kuch Hasb-E Aarzo Na Mila

Yahan Kisi Ko Bhi Kuch Hasb-E Aarzo Na Mila
Kisi Ko Ham Na Milay Aur Ham Ko Tu Na Mila

Wo Mujh Se Apna Pata Pochne Ko Aa Nikle

Wo Mujh Se Apna Pata Pochne Ko Aa Nikle
Keh Jin Se Mein Ne Khud Apna Suragh Paya Tha

Us Ko Bhi Yaad Karne Ki Fursat Na Thi Mujhe

Us Ko Bhi Yaad Karne Ki Fursat Na Thi Mujhe
Masroof Tha Mein Kuch Bhi Na Karne Ke Ba-Wajod

Safar Peche Ki Janab Hai Qadam Aage Hai Mera

Zafar Iqbal poetry
Zafar Iqbal poetry

Safar Peche Ki Janab Hai Qadam Aage Hai Mera
Mein Borha Hota Jata Hun Jawan Hone Ki Khatir

Tiktiki Bandh Ke Mein Dekh Raha Hun Jis Ko

Tiktiki Bandh Ke Mein Dekh Raha Hun Jis Ko
Ye Bhi Ho Sakta Hai Wo Samne Betha Hi Na Ho

Jesi Ab Hai Aesi Halat Mein Nahi Reh Sakta

Jesi Ab Hai Aesi Halat Mein Nahi Reh Sakta
Mein Hamesha Tu Mohabat Mein Nahi Reh Sakta

Us Ko Aana Tha Ke Wo Mujh Ko Bulata Tha Kahin

Us Ko Aana Tha Ke Wo Mujh Ko Bulata Tha Kahin
Raat Bhar Barish Thi, Us Ka Raat Bhar Pegham Tha

Apne He Samne Dewaar Bna Betha Hun

Zafar Iqbal poetry
Zafar Iqbal poetry

Apne He Samne Dewaar Bna Betha Hun
Hai Ye Anjam Usay Raaste Se Hata Dene Ka

Abhi Meri Apni Samajh Mein Bhi Nahi Aa Rahi

Abhi Meri Apni Samajh Mein Bhi Nahi Aa Rahi
Mein Jabhi Tu Baat Ko Mukhtasir Nahi Kar Raha

Ab Ke Is Bazam Mein Kuch Apna Pata Bhi Dena

Ab Ke Is Bazam Mein Kuch Apna Pata Bhi Dena
Paon Par Paon Jo Rakhna Tu Daba Bhi Dena

Wo Bohat Chalak He Lekin Agar Himat Krein

Wo Bohat Chalak He Lekin Agar Himat Krein
Pehla Pehla Jhoot Hai Us Ko Yaqeen A Jaye Ga

Tujh Ko Meri Na Mujhe Teri Khabar Jaye Gi

Zafar Iqbal poetry
Zafar Iqbal poetry

Tujh Ko Meri Na Mujhe Teri Khabar Jaye Gi
Eid Ab Ki Bhi Dabe Paon Guzar Jaye Gi

Waqt Zaya Na Karo Ham Nahi Aesay Wesay

Waqt Zaya Na Karo Ham Nahi Aesay Wesay
Ye Ishara Tu Mujhe Us Ne Kayi Bar Diya

Mein Kisi Aur Zamane Ke Liye Hun Shayad

Mein Kisi Aur Zamane Ke Liye Hun Shayad
Is Zamane Mein Hai Mushkil Mera Zahir Hona

woh mujhse apna pata pochne ko nikal aaye

woh mujhse apna pata pochne ko nikal aaye
ke jin se maine khud apna suragh paaya

mein kis umeed pe wabista kar loon khuwahishein apni

Zafar Iqbal poetry
Zafar Iqbal poetry

mein kis umeed pe wabista kar loon khuwahishein apni
tere mizaaj ke mausam ka koi aitbaar nahi

_________________

Zafar Iqbal Poems

ابھی کسی کے نہ میرے کہے سے گزرے گا

ابھی کسی کے نہ میرے کہے سے گزرے گا
وہ خود ہی ایک دن اس دائرے سے گزرے گا

بھری رہے ابھی آنکھوں میں اس کے نام کی نیند
وہ خواب ہے تو یونہی دیکھنے سے گزرے گا

جو اپنے آپ گزرتا ہے کوچۂ دل سے
مجھے گماں تھا مرے مشورے سے گزرے گا

قریب آنے کی تمہید ایک یہ بھی رہی
وہ پہلے پہلے ذرا فاصلے سے گزرے گا

قصوروار نہیں پھر بھی چھپتا پھرتا ہوں
وہ میرا چور ہے اور سامنے سے گزرے گا

چھپی ہو شاید اسی میں سلامتی دل کی
یہ رفتہ رفتہ اگر ٹوٹنے سے گزرے گا

ہماری سادہ دلی تھی جو ہم سمجھتے رہے
کہ عکس ہے تو اسی آئینے سے گزرے گا

سمجھ ہمیں بھی ہے اتنی کہ اس کا عہد ستم
گزارنا ہے تو اب حوصلے سے گزرے گا

گلی گلی مرے ذرے بکھر گئے تھے ظفرؔ
خبر نہ تھی کہ وہ کس راستے سے گزرے گا

اپنے انکار کے برعکس برابر کوئی تھا

اپنے انکار کے برعکس برابر کوئی تھا
دل میں اک خواب تھا اور خواب کے اندر کوئی تھا

ہم پسینے میں شرابور تھے اور دور کہیں
ایسے لگتا ہے کہیں تخت ہوا پر کوئی تھا

اس کے باغات پہ اترا ہوا تھا موسم رنگ
قابل دید ہر اک سمت سے منظر کوئی تھا

شک اگر تھا بھی تو مٹتا گیا ہوتے ہوتے
اور اب پختہ یقیں ہے کہ سراسر کوئی تھا

اس دل تنگ میں کیا اس کی رہائش ہوتی
یعنی اندر تو نہیں تھا مرے باہر کوئی تھا

شکل کچھ یاد ہے کچھ بھول چکی ہے اس کی
کوئی دن تھے کہ مکمل مجھے ازبر کوئی تھا

دائرے میں کبھی رکھا ہی نہیں اس نے قدم
اور محبت کے مضافات میں اکثر کوئی تھا

میں اسے چھوڑ کے خود ہی چلا آیا تھا کبھی
اور اب پوچھتا پھرتا ہوں مرا گھر کوئی تھا

یاوہ گو تھا ظفرؔ اس عہد خرابی میں کوئی
یاوہ گو ہی اسے کہتے ہیں سخن ور کوئی تھا

بس ایک بار کسی نے گلے لگایا تھا

بس ایک بار کسی نے گلے لگایا تھا
پھر اس کے بعد نہ میں تھا نہ میرا سایا تھا

گلی میں لوگ بھی تھے میرے اس کے دشمن لوگ
وہ سب پہ ہنستا ہوا میرے دل میں آیا تھا

اس ایک دشت میں سو شہر ہو گئے آباد
جہاں کسی نے کبھی کارواں لٹایا تھا

وہ مجھ سے اپنا پتا پوچھنے کو آ نکلے
کہ جن سے میں نے خود اپنا سراغ پایا تھا

مرے وجود سے گلزار ہو کے نکلی ہے
وہ آگ جس نے ترا پیرہن جلایا تھا

مجھی کو طعنۂ غارت گری نہ دے پیارے
یہ نقش میں نے ترے ہاتھ سے مٹایا تھا

اسی نے روپ بدل کر جگا دیا آخر
جو زہر مجھ پہ کبھی نیند بن کے چھایا تھا

ظفرؔ کی خاک میں ہے کس کی حسرت تعمیر
خیال و خواب میں کس نے یہ گھر بنایا تھا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *