Munir Niazi

Munir Niazi

منیر نیازی

9 April 1928

26 December 2006

Munir Niazi
Munir Niazi

Munir Niazi (منیرنیازی)Is Also Known As Munir Ahmad He Was Born In Niazi Tribe On 9 April 1928 In Punjab He Was An Pathan But Called Himself Punjabi Cuz He Is From Punjab And Niazi Tribe Is A Saraiki Tribe.And He Was The Best Urdu And Punjabi Poet And He Awarded By Sitara E Imtiaz For His Great Poetry .On 26 December 2006 Age Of 78 Years Old

 

Munir Niazi Poetry

Ghair Se Nafrat Jo Pali Kharch Khud Par Ho Gyi

Munir Niazi Poetry
Munir Niazi Poetry

Ghair Se Nafrat Jo Pali Kharch Khud Par Ho Gyi
Jitney Ham Thy Ham Ne Khud Ko Us Se Aadha Kar Liya

Khushbu Ki Dewar Ke Peche Kese Kese Rang Jamay Hain

Khushbu Ki Dewar Ke Peche Kese Kese Rang Jamay Hain
Jab Tak Din Ka Soraj Aaye Us Ka Khoj Lagate Rehna

Jaante Thy Dono Ham Us Ko Nibah Nahi Sakte

Jaante Thy Dono Ham Us Ko Nibah Nahi Sakte
Us Ne Waada Kar Liya Mein Ne Bhi Waada Kr Liya

Aadat Hi Bna Li Hai Tum Ne Tu Munir Apni

Aadat Hi Bna Li Hai Tum Ne Tu Munir Apni
Jis Shehr Mein Rehna Uktaye Hoye Rehna

Khayal Jis Ka Tha Muje Khayal Mein Mila Muje

Munir Niazi Poetry
Munir Niazi Poetry

Khayal Jis Ka Tha Muje Khayal Mein Mila Muje
Sawal Ka Jawab Bhi Sawal Mein Mila Muje

Kisi Ko Apne Amal Ka Hisab Kya Dete

Kisi Ko Apne Amal Ka Hisab Kya Dete
Sawal Sare Ghalat Thay Jawab Kya Dete

Meri Sari Zindagi Ko Be Samar Us Ne Kya

Meri Sari Zindagi Ko Be Samar Us Ne Kya
Umar Meri Thi Mgar Us Ko Basar Us Ne Kya

Khwahishen Ghar Se Bahar Dor Jaane Ki Bohat

Khwahishen Ghar Se Bahar Dor Jaane Ki Bohat
Shoq Lekin Dil Mein Wapis Lot Aane Ka Tha

Wo Jis Ko Mein Samjhta Raha Kamyab Din

Munir Niazi Poetry
Munir Niazi Poetry

Wo Jis Ko Mein Samjhta Raha Kamyab Din
Wo Din Tha Meri Zindagi Ka Kharab Din

Khwab Hote Hain Dekhne Ke Liye

Khwab Hote Hain Dekhne Ke Liye
In Mein Ja Ka Magar Raha Na Karo

Thake Logo Ko Majbori Mein Chalet Dekh Leta Hun

Thake Logo Ko Majbori Mein Chalet Dekh Leta Hun
Main Bus Ki Kharkion Se Ye Tamashe Dekh Leta Hun

Kuch Waqt Chahte Thay Keh Sochen Tere Liye

Kuch Waqt Chahte Thay Keh Sochen Tere Liye
Tu Ne Wo Waqt Ham Ko Zamane Nahi Diya

Hasti Hi Apni Kya Hai Zaman Eke Saamne

Munir Niazi Poetry
Munir Niazi Poetry

Hasti Hi Apni Kya Hai Zaman Eke Saamne
Ik Khwab Hain Jahan Mein Bikhar Jayen Ham Tu Kya

kujj sher de log vi zalam sann

kujj sher de log vi zalam sann
kujj sanu maran da shook vi si

Tum Mere Liye Itne Pareshan Se Kyun Ho

Tum Mere Liye Itne Pareshan Se Kyun Ho
Mein Dob Bhi Jata Tu Kahin Aur Ubarhta

Khayal Jis Ka Tha Muje Khayal Mein Mila Muje

Khayal Jis Ka Tha Muje Khayal Mein Mila Muje
Sawal Ka Jawab Bi Sawal Mein Mila Muje

Milti Nahi Pnah Hmain Jis Zmain Par

Milti Nahi Pnah Hmain Jis Zmain Par
Ik Hashr Us Zameen Pe Utha Dena Chahiye

uss aakhri nazar mein ajab dard tha munir

uss aakhri nazar mein ajab dard tha munir
uss ke jaane ka ranj mujhe umar bhar rha

Koi Tu Hai Munir Jisay Fikar Hai Meri

Munir Niazi Poetry
Munir Niazi Poetry

Koi Tu Hai Munir Jisay Fikar Hai Meri
Ye Jaan Kar Ajeeb Se Hairat Hui Muje

______________

Munir Niazi Poems

اس کا نقشہ ایک بے ترتیب افسانے کا تھا

اس کا نقشہ ایک بے ترتیب افسانے کا تھا
یہ تماشا تھا یا کوئی خواب دیوانے کا تھا

سارے کرداروں میں بے رشتہ تعلق تھا کوئی
ان کی بے ہوشی میں غم سا ہوش آ جانے کا تھا

عشق کیا ہم نے کیا آوارگی کے عہد میں
اک جتن بے چینیوں سے دل کو بہلانے کا تھا

خواہشیں ہیں گھر سے باہر دور جانے کی بہت
شوق لیکن دل میں واپس لوٹ کر آنے کا تھا

لے گیا دل کو جو اس محفل کی شب میں اے منیرؔ
اس حسیں کا بزم میں انداز شرمانے کا تھا

اک عالم ہجراں ہی اب ہم کو پسند آیا

اک عالم ہجراں ہی اب ہم کو پسند آیا
یہ خانۂ ویراں ہی اب ہم کو پسند آیا

بے نام و نشاں رہنا غربت کے علاقے میں
یہ شہر بھی دل کش تھا تب ہم کو پسند آیا

تھا لال ہوا منظر سورج کے نکلنے سے
وہ وقت تھا وہ چہرہ جب ہم کو پسند آیا

ہے قطع تعلق سے دل خوش بھی بہت اپنا
اک حد ہی بنا لینا کب ہم کو پسند آیا

آنا وہ منیرؔ اس کا بے خوف و خطر ہم تک
یہ طرفہ تماشا بھی شب ہم کو پسند آیا

آئنہ اب جدا نہیں کرتا

آئنہ اب جدا نہیں کرتا
قید میں ہوں رہا نہیں کرتا

مستقل صبر میں ہے کوہ گراں
نقش عبرت صدا نہیں کرتا

رنگ محفل بدلتا رہتا ہے
رنگ کوئی وفا نہیں کرتا

عیش دنیا کی جستجو مت کر
یہ دفینہ ملا نہیں کرتا

جی میں آئے جو کر گزرتا ہے
تو کسی کا کہا نہیں کرتا

ایک وارث ہمیشہ ہوتا ہے
تخت خالی رہا نہیں کرتا

عہد انصاف آ رہا ہے منیرؔ
ظلم دائم ہوا نہیں کرتا

اک تیز تیر تھا کہ لگا اور نکل گیا

اک تیز تیر تھا کہ لگا اور نکل گیا
ماری جو چیخ ریل نے جنگل دہل گیا

سویا ہوا تھا شہر کسی سانپ کی طرح
میں دیکھتا ہی رہ گیا اور چاند ڈھل گیا

خواہش کی گرمیاں تھیں عجب ان کے جسم میں
خوباں کی صحبتوں میں مرا خون جل گیا

تھی شام زہر رنگ میں ڈوبی ہوئی کھڑی
پھر اک ذرا سی دیر میں منظر بدل گیا

مدت کے بعد آج اسے دیکھ کر منیرؔ
اک بار دل تو دھڑکا مگر پھر سنبھل گیا

اپنا تو یہ کام ہے بھائی دل کا خون بہاتے رہنا

اپنا تو یہ کام ہے بھائی دل کا خون بہاتے رہنا
جاگ جاگ کر ان راتوں میں شعر کی آگ جلاتے رہنا

اپنے گھروں سے دور بنوں میں پھرتے ہوئے آوارہ لوگو
کبھی کبھی جب وقت ملے تو اپنے گھر بھی جاتے رہنا

رات کے دشت میں پھول کھلے ہیں بھولی بسری یادوں کے
غم کی تیز شراب سے ان کے تیکھے نقش مٹاتے رہنا

خوشبو کی دیوار کے پیچھے کیسے کیسے رنگ جمے ہیں
جب تک دن کا سورج آئے اس کا کھوج لگاتے رہنا

تم بھی منیرؔ اب ان گلیوں سے اپنے آپ کو دور ہی رکھنا
اچھا ہے جھوٹے لوگوں سے اپنا آپ بچاتے رہنا

اپنی ہی تیغ ادا سے آپ گھائل ہو گیا

اپنی ہی تیغ ادا سے آپ گھائل ہو گیا
چاند نے پانی میں دیکھا اور پاگل ہو گیا

وہ ہوا تھی شام ہی سے رستے خالی ہو گئے
وہ گھٹا برسی کہ سارا شہر جل تھل ہو گیا

میں اکیلا اور سفر کی شام رنگوں میں ڈھلی
پھر یہ منظر میری نظروں سے بھی اوجھل ہو گیا

اب کہاں ہوگا وہ اور ہوگا بھی تو ویسا کہاں
سوچ کر یہ بات جی کچھ اور بوجھل ہو گیا

حسن کی دہشت عجب تھی وصل کی شب میں منیرؔ
ہاتھ جیسے انتہائے شوق سے شل ہو گیا

خاموش رہا نہ کرو

اتنے خاموش بهی رہا نہ کرو
غم جدائی میں یوں کیا نہ کرو
خواب ہوتے ہیں دیکهنے کےلیے
ان میں جا کر مگر رہا نہ کرو
کچه نہیں ہو گا گلہ کرنے سے
ان سے نکلیں حکاتیں شاید
حرف لکه کر مٹا دیا نہ کرو
اپنے رتبے کا کچه لحاظ منیر
یار سب کو بنا لیا نہ کرو

اس سمت مجھ کو یار نے جانے نہیں دیا

اس سمت مجھ کو یار نے جانے نہیں دیا
اک اور شہر یار میں آنے نہیں دیا

کچھ وقت چاہتے تھے کہ سوچیں ترے لیے
تو نے وہ وقت ہم کو زمانے نہیں دیا

منزل ہے اس مہک کی کہاں کس چمن میں ہے
اس کا پتہ سفر میں ہوا نے نہیں دیا

روکا انا نے کاوش بے سود سے مجھے
اس بت کو اپنا حال سنانے نہیں دیا

ہے جس کے بعد عہد زوال آشنا منیرؔ
اتنا کمال ہم کو خدا نے نہیں دیا

____________

Munir Niazi Poems In English

Jo Mujhe Bhula Dain Ge Main Unhain Bhula Donga

Jo Mujhe Bhula Dain Ge Main Unhain Bhula Donga
Sab Gharoor Un Ka Main Khak Main Mila Doonga

Dekhta Hoon Sab Shaklein, Sun Raha Hoon Sab Baatain
Sab Hisab Un Ka Main Aik Din Choka Donga

Roshni Dakhadonga In Andhair Nagroon Main
Ik Hawa Ziaun Ki Char So Chla Donga

Be Missal Qaryun K Be Kinar Baghon K
Apne Khawab Logon K Khawab Main Dikhadon Ga

Main Munir Jaoonga Aik Din Use Milne
Us Ke Darpe Ja Ke Main Aik Din Sada Donga

Shabe Mahtaab Nay Shah Nasheen Peh Ajeeb Gul Sa Khila Dia

Shabe mahtaab nay shah nasheen peh ajeeb Gul sa khila dia
Mujhe yun laga kisi Hath nay meray Dil peh Teer chala dia

Koi aisi Baat zaroor thi Shab e Wada woh jo na aasaka
Koi apna waham tha Darmiyan ya ghata nay is ko Dara dia

Yahi aan thi meri zindagi, lagi Aag Dil mein to uf na ki
Jo jahan mein koi na kar saka woh Kamal kar kay dikha dia

Yeh jo laal rung patang ka sar e aasman hai ura hua
Yeh chiragh dast e hina ka hai jo hawa mein is nay jala dia

Mere pas aisa talsam hai, jo kayi zamanon ka ism hai
Usay jab bhi socha bola lia, Usay jo bhi chaha bana dia.

Sehar Kay Khwab Ka Mujh Par Asar Kuch Der Rehnay Do

Sehar Kay Khwab Ka Mujh Par Asar Kuch Der Rehnay Do
Kisi Kay Haal Ki Mujh Ko Khabar Kuch Der Rehnay Do

Juray Hain In Say Nadidah Puranay Baam O Darwazay
Naye Shahron Mein Yeh Weeran Ghar Kuch Der Rehnay Do

Kahin Guzray Huye Aiyam Phir Wapis Na Aajayein
Dil Hai Khof Mein Is Ka Khatar Kuch Der Rehnay Do

Saba Ks Rung Say Baghon Mein Chalti Ser Karti Hai
Isay Is Apni Dhun Mein Be Khabar Kuch Der Rehnay Do

Monir Is Aalam Roshan Mein Rehna Aur Khush Rehna
Abhi Is Din Say Aagay Ka Safar Kuch Der Rehnay Doa

Skoon Deti Hai Dil Ko Kabhi Kabhi Ki Dua

Skoon Deti Hai Dil Ko Kabhi Kabhi Ki Dua
Kabhi Kabhi Ki Dua Mein Hai Tazgi Ki Dua

Buhat Duayein Bhi Deti Hai Be Hisi Dil Ko
Buhat Duayein Bhi Hoti Hain Be Dili Ki Dua

Hamesha Der Kar Deta Hun Main

Zaruri Bat Kahni Ho
Koi Wada Nibhana Ho
Use Awaz Deni Ho
Use Wapas Bulana Ho
Hamesha Der Kar Deta Hun Main

Madad Karni Ho Uski
Yar Ki Dharas Bandhana Ho
Bahut Derina Raston Par
Kisi Se Milne Jana Ho
Hamesha Der Kar Deta Hun Main

Badalte Mausamon Ki Sair Main
Dil Ko Lagana Ho
Kisi Ko Yad Rakhna Ho
Kisi Ko Bhul Jana Ho
Hamesha Der Kar Deta Hun Main

Kisi Ko Maut Se Pahle
Kisi Gam Se Bachna Ho
Haqiqat Aur Thi Kuch
Us Ko Ja K Ye Batana Ho
Hamesha Der Kar Deta Hun Main

Meri Sari Zindagi Ko Besamar Us

Meri Sari Zindagi Ko Besamar Us Ne Kia
Umar Meri Thi Magar Is Ko Basar Us Ne Kia

Main Bohat Kamzor Tha Is Mulk Mein Hijrat K Baad
Per Mujhe Is Mulk Mein Kamzor Tar Us Ne Kia

Rehber Mera Bana Gumrah Kerne K Liye
Mujh Ko Seedhe Raastay Se Dar Badar Us Ne Kia

Sheher Mein Wo Mo’ataber Meri Gawahi Se Huwa
Phir Mujhe Is Sheher Mein Na Mo’atber Us Ne Kia

Sheher Ko Us Ne Barbaad Ker K Rakh Dia Muneer
Sheher Per Zulm Mere Naam Per Us Ne Kia

Saaya-e-Qasr-e-Yaar Mein Baitha

Saaya-e-Qasr-e-Yaar Mein Baitha
Mein Tha Apnay Khumaar Mein Baitha

Os Ka Aana Tha Khwaab Mein Aana
Mein Abs-e-Intezaar Mein Baitha

Koi Soorat Nahi Hai Os Jaisi
Osko Dekho Hazaar Mein Baitha

Osko Khushion Se Khauf Aata Hai
Weham Kia Zehen-e-Yaar Mein Baitha

Hum Bhee Raston Mein Phir Rahay Thay Muneer
Wo Bhee Tha Raahguzar Mein Baitha

Zinda Rahen To Kya Hai Jo Mar

Zinda Rahen To Kya Hai Jo Mar Jayen Ham To Kya
Duniya Main Khamoshi Se Guzar Jayen Ham To Kya

Hasti Hi Apni Kya Hai Zamane K Samne
Ek Khwab Hain Jahan Main Bikhar Jayen Ham To Kya

Ab Kaun Muntazir Hai Hamare Liye Wahan
Sham A Gai Hai Laut K Ghar Jayen Ham To Kya

Dil Ki Khalish To Sath Rahegi Tamam Umr
Dariya-E-Gam K Par Utar Jayen Ham To Kya

Us Simt Mujh Ko Yar Ne Jane

Us Simt Mujh Ko Yar Ne Jane Nahin Diya
Ek Aur Shahar-E-Yar Main Ane Nahin Diya

Kuch Aur Waqt Chahte The K Sochen Tere Liye
Tune Wo Waqt Ham Ko Zamane Nahin Diya

Manzil Hai Is Mahak Ki Kahan Kis Chaman Main Hai
Is Ka Pata Safar Main Hawa Ne Nahin Diya

Roka Ana Ne Kawish-E-Besud Se Mujhe
Us But Ko Apna Hal Sunane Nahin Diya

Hai Jis K Bad Ahad-E-Zawal-Ashna “Munir”
Itna Kamal Ham Ko Khuda Ne Nahin Diya

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *