Mir Taqi Mir

Mir Taqi Mir

مِیر تقی مِیرؔ

Mir Taqi Mir
Mir Taqi Mir

February 1723
21 September 1810

Mir Taqi Mir (مِیر تقی مِیرؔ‬) Was An Best Urdu Poet 18Th Century.Mir Taqi Mir Was A Principle Of Urdu Poetry School In Delhi.Mir Taqi Mir Was Born In Agra India On (Date Not Confirm)February 1723 .Mir Taqi Mir Pen Name Was Meer .Meer Died In 21 September 1810 Age Of 87 Years

Mir Taqi Mir Poetry

Aag They Ibtadye Ishq Mein Ham

Mir Taqi Mir Poetry
Mir Taqi Mir Poetry

Aag They Ibtadye Ishq Mein Ham
Ho Gaye Khak Intiha Ye Hai

Ishq Ik ‘Mir’ Bhari Pathar Hai

Ishq Ik ‘Mir’ Bhari Pathar Hai
Kab Ye Tuj Naatwan Se Uthta Hai

Dil Ki Verani Ka Kia Mazkor Hai

Dil Ki Verani Ka Kia Mazkor Hai
Ye Nagar So Martba Loga Gya

Mir Un Neem Baz Aankhon Main

Mir Un Neem Baz Aankhon Main
Sari Masti Shrab Ki Si Hai

Bulbul Ghazal Sarai Aage Hamare Mat Kar

Mir Taqi Mir Poetry
Mir Taqi Mir Poetry

Bulbul Ghazal Sarai Aage Hamare Mat Kar
Sab Ham Se Sekhte Hain Andaz Guftagu Ka

Jab Ke Pehlu Se Yaar Uthta Hai

Jab Ke Pehlu Se Yaar Uthta Hai
Dard Be Ikhtiar Uthta Hai

Bewafai Pey Teri Jee Hai Fida

Bewafai Pey Teri Jee Hai Fida
Qahar Hota Jo Bawafa Hota

Be-Khudi Le Gayi Kahan Ham Ko

Be-Khudi Le Gayi Kahan Ham Ko
Dair Se Intezaar Hai Apna

Ab Dekh Le Ke Sena Bhi Taza Hoya Hai Chak

Mir Taqi Mir Poetry
Mir Taqi Mir Poetry

Ab Dekh Le Ke Sena Bhi Taza Hoya Hai Chak
Phir Ham Se Apna Hal Dikhaya Na Jaye Ga

Yun Nakam Rahen Gey Kab Tak Ji Mein Hai Ik Kaam Karen

Yun Nakam Rahen Gey Kab Tak Ji Mein Hai Ik Kaam Karen
Ruswa Ho Kar Mar Jawain Us Ko Bhi Badnam Kren

Pata Pata Bota Bota Haal Hamara Jane Hai

Pata Pata Bota Bota Haal Hamara Jane Hai
Jane Na Jane Dil Hi Na Jane Bagh Tu Sara Jane Hai

Kehte Tu Ho Yun Kehte Yun Kehte Jo Vo Ata

Kehte Tu Ho Yun Kehte Yun Kehte Jo Vo Ata
Ye Kehne Ki Baatain Hain Kuch Bhi Na Kaha Jata

Rah Dor Ishq Mein Rota Hai Kya

Mir Taqi Mir Poetry
Mir Taqi Mir Poetry

Rah Dor Ishq Mein Rota Hai Kya
Aage Aage Dekhiye Hota Hai Kya

Gham Raha Jab Tak Keh Dam Mein Dam Raha

Gham Raha Jab Tak Keh Dam Mein Dam Raha
Dil Ke Jane Ka Nahayat Gham Raha

Ab Tu Jate Hain But Kade Se Mir

Ab Tu Jate Hain But Kade Se Mir
Phir Milen Gey Agar Khuda Laya

Pata Pata Bota Bota Haal Hmara Jaane Hai

Pata Pata Bota Bota Haal Hmara Jaane Hai
Jaane Na Jaane Gul Hi Na Jaane Bagh Tu Sara Jaane Hai

Daikh Tu Dil Ke Jaan Se Uthta Hai

Mir Taqi Mir PoetryMir Taqi Mir Poetry
Mir Taqi Mir Poetry

Daikh Tu Dil Ke Jaan Se Uthta Hai
Ye Dhuan Kahan Se Uthta Hai

Phirte Hai Mir Khwar Koi Pochta Hi Nahi

Phirte Hai Mir Khwar Koi Pochta Hi Nahi
Is Aashqi Main Tu Izat Saadat Bi Gayi

Nazki Us Ke Lab Ke Kia Kehye

Nazki Us Ke Lab Ke Kia Kehye
Pankhari Ik Gulab Ki Si Hai

Wo Aaye Bazm Main Itna Tu Mir Ne Dekha

Wo Aaye Bazm Main Itna Tu Mir Ne Dekha
Phir Is Ke Bad Chiraghon Main Roshni Na Rahi

Ab Kar Ke Faramosh Tu Nashad Karo Gey

Mir Taqi Mir Poetry
Mir Taqi Mir Poetry

Ab Kar Ke Faramosh Tu Nashad Karo Gey
Par Ham Jo Na Hon Gey Tu Bohat Yaad Karo Gey

Milne Ka Wa’ada Un Ke Tu Munh Se Nikal Gya

Milne Ka Wa’ada Un Ke Tu Munh Se Nikal Gya
Pochi Jga Ju Mai Ne Tu Kha Hans Ke Khwab Ma

Ulti Ho Gayi Sab Tadberain Kuch Na Dava Ne Kam Kia

Mir Taqi Mir Poetry
Mir Taqi Mir Poetry

Ulti Ho Gayi Sab Tadberain Kuch Na Dava Ne Kam Kia
Dekha Is Bemari-e Dil Ne Aakhir Kaam Tamam Kia

 

_______________

Mir Taqi Mir Poems In Urdu

الٹی ہو گئیں سب تدبیریں کچھ نہ دوا نے کام کیا

الٹی ہو گئیں سب تدبیریں کچھ نہ دوا نے کام کیا
دیکھا اس بیماری دل نے آخر کام تمام کیا

عہد جوانی رو رو کاٹا پیری میں لیں آنکھیں موند
یعنی رات بہت تھے جاگے صبح ہوئی آرام کیا

حرف نہیں جاں بخشی میں اس کی خوبی اپنی قسمت کی
ہم سے جو پہلے کہہ بھیجا سو مرنے کا پیغام کیا

ناحق ہم مجبوروں پر یہ تہمت ہے مختاری کی
چاہتے ہیں سو آپ کریں ہیں ہم کو عبث بدنام کیا

سارے رند اوباش جہاں کے تجھ سے سجود میں رہتے ہیں
بانکے ٹیڑھے ترچھے تیکھے سب کا تجھ کو امام کیا

سرزد ہم سے بے ادبی تو وحشت میں بھی کم ہی ہوئی
کوسوں اس کی اور گئے پر سجدہ ہر ہر گام کیا

کس کا کعبہ کیسا قبلہ کون حرم ہے کیا احرام
کوچے کے اس کے باشندوں نے سب کو یہیں سے سلام کیا

شیخ جو ہے مسجد میں ننگا رات کو تھا مے خانے میں
جبہ خرقہ کرتا ٹوپی مستی میں انعام کیا

کاش اب برقعہ منہ سے اٹھا دے ورنہ پھر کیا حاصل ہے
آنکھ مندے پر ان نے گو دیدار کو اپنے عام کیا

یاں کے سپید و سیہ میں ہم کو دخل جو ہے سو اتنا ہے
رات کو رو رو صبح کیا یا دن کو جوں توں شام کیا

صبح چمن میں اس کو کہیں تکلیف ہوا لے آئی تھی
رخ سے گل کو مول لیا قامت سے سرو غلام کیا

ساعد سیمیں دونوں اس کے ہاتھ میں لا کر چھوڑ دیئے
بھولے اس کے قول و قسم پر ہائے خیال خام کیا

کام ہوئے ہیں سارے ضائع ہر ساعت کی سماجت سے
استغنا کی چوگنی ان نے جوں جوں میں ابرام کیا

ایسے آہوئے رم خوردہ کی وحشت کھونی مشکل تھی
سحر کیا اعجاز کیا جن لوگوں نے تجھ کو رام کیا

میرؔ کے دین و مذہب کو اب پوچھتے کیا ہو ان نے تو
قشقہ کھینچا دیر میں بیٹھا کب کا ترک اسلام کیا

باتیں ہماری یاد رہیں پھر باتیں ایسی نہ سنیے گا

باتیں ہماری یاد رہیں پھر باتیں ایسی نہ سنیے گا
پڑھتے کسو کو سنیے گا تو دیر تلک سر دھنیے گا

سعی و تلاش بہت سی رہے گی اس انداز کے کہنے کی
صحبت میں علما فضلا کی جا کر پڑھیے گنیے گا

دل کی تسلی جب کہ ہوگی گفت و شنود سے لوگوں کی
آگ پھنکے گی غم کی بدن میں اس میں جلیے بھنیے گا

گرم اشعار میرؔ درونہ داغوں سے یہ بھر دیں گے
زرد رو شہر میں پھریے گا گلیوں میں نے گل چنیے گا

اس کے کوچے سے جو اٹھ اہل وفا جاتے ہیں

اس کے کوچے سے جو اٹھ اہل وفا جاتے ہیں
تا نظر کام کرے رو بقفا جاتے ہیں

متصل روتے ہی رہیے تو بجھے آتش دل
ایک دو آنسو تو اور آگ لگا جاتے ہیں

وقت خوش ان کا جو ہم بزم ہیں تیرے ہم تو
در و دیوار کو احوال سنا جاتے ہیں

جائے گی طاقت پا آہ تو کریے گا کیا
اب تو ہم حال کبھو تم کو دکھا جاتے ہیں

ایک بیمار جدائی ہوں میں آپھی تس پر
پوچھنے والے جدا جان کو کھا جاتے ہیں

غیر کی تیغ زباں سے تری مجلس میں تو ہم
آ کے روز ایک نیا زخم اٹھا جاتے ہیں

عرض وحشت نہ دیا کر تو بگولے اتنی
اپنی وادی پہ کبھو یار بھی آ جاتے ہیں

میرؔ صاحب بھی ترے کوچے میں شب آتے ہیں لیک
جیسے دریوزہ گری کرنے گدا جاتے ہیں

اس عہد میں الٰہی محبت کو کیا ہوا

اس عہد میں الٰہی محبت کو کیا ہوا
چھوڑا وفا کو ان نے مروت کو کیا ہوا

امیدوار وعدۂ دیدار مر چلے
آتے ہی آتے یارو قیامت کو کیا ہوا

کب تک تظلم آہ بھلا مرگ کے تئیں
کچھ پیش آیا واقعہ رحمت کو کیا ہوا

اس کے گئے پر ایسے گئے دل سے ہم نشیں
معلوم بھی ہوا نہ کہ طاقت کو کیا ہوا

بخشش نے مجھ کو ابر کرم کی کیا خجل
اے چشم جوش اشک ندامت کو کیا ہوا

جاتا ہے یار تیغ بکف غیر کی طرف
اے کشتۂ ستم تری غیرت کو کیا ہوا

تھی صعب عاشقی کی بدایت ہی میرؔ پر
کیا جانیے کہ حال نہایت کو کیا ہوا

اس کا خیال چشم سے شب خواب لے گیا

اس کا خیال چشم سے شب خواب لے گیا
قسمے کہ عشق جی سے مرے تاب لے گیا

کن نیندوں اب تو سوتی ہے اے چشم گریہ ناک
مژگاں تو کھول شہر کو سیلاب لے گیا

آوے جو مصطبہ میں تو سن لو کہ راہ سے
واعظ کو ایک جام مئے ناب لے گیا

نے دل رہا بجا ہے نہ صبر و حواس و ہوش
آیا جو سیل عشق سب اسباب لے گیا

میرے حضور شمع نے گریہ جو سر کیا
رویا میں اس قدر کہ مجھے آب لے گیا

احوال اس شکار زبوں کا ہے جائے رحم
جس ناتواں کو مفت نہ قصاب لے گیا

منہ کی جھلک سے یار کے بے ہوش ہو گئے
شب ہم کو میرؔ پرتو مہتاب لے گیا

اشک آنکھوں میں کب نہیں آتا

اشک آنکھوں میں کب نہیں آتا
لوہو آتا ہے جب نہیں آتا

ہوش جاتا نہیں رہا لیکن
جب وہ آتا ہے تب نہیں آتا

صبر تھا ایک مونس ہجراں
سو وہ مدت سے اب نہیں آتا

دل سے رخصت ہوئی کوئی خواہش
گریہ کچھ بے سبب نہیں آتا

عشق کو حوصلہ ہے شرط ارنہ
بات کا کس کو ڈھب نہیں آتا

جی میں کیا کیا ہے اپنے اے ہمدم
پر سخن تا بلب نہیں آتا

دور بیٹھا غبار میرؔ اس سے
عشق بن یہ ادب نہیں آتا

قصد گر امتحان ہے پیارے

قصد گر امتحان ہے پیارے
اب تلک نیم جان ہے پیارے

گفتگو ریختے میں ہم سے نہ کر
یہ ہماری زبان ہے پیارے

چھوڑ جاتے ہیں دل کو تیرے پاس
یہ ہمارا نشان ہے پیارے

میر عمدن بھی کوئی مرتا ہے
جان ہے تو جہان ہے پیارے

مِرے سلیقے سے میری نِبھی محبّت میں

مِرے سلیقے سے میری نِبھی محبّت میں
تمام عُمر میں ناکامیوں سے کام لیا

اگرچہ گوشہ گزیں ھُوں میں شاعروں میں، میر
پہ میرے شور نے روُئے زمیں تمام لیا

_____________

Mir Taqi Mir Poems In Hindi/English

 

Kya Kahun Tum Se Main Ke Kya Hai Ishq

Kya Kahun Tum Se Main Ke Kya Hai Ishq
Jaan Ka Rog Hai Bala Hai Ishq

Ishq Hi Ishq Hai Jahaan Dekho
Saare Aalam Mein Bhar Raha Hai Ishq

Ishq Maashuq Ishq Aashiq Hai
Yaani Apna Hi Mubtala Hai Ishq

Ishq Hai Tarz-O-Taur Ishq Ke Taeen
Kahin Banda Kahin Khuda Hai Ishq

Kaun Maqsad Ko Ishq Bin Pohuncha
Aarzoo Ishq Wa Mudda Hai Ishq

Koi Khwaahan Nahin Mahabbat Ka
Tu Kahe Jins-E-Narawa Hai Ishq

Mir Ji Zarad Hote Jaate Hain
Kya Kahin Tum Ne Bhi Kiya Hai Ishq

Tum Nahi Fitana-Saz Sach Sahab

Tum Nahi Fitana-Saz Sach Sahab

Shahar Pur-Shor is Gulam Se Hai

Koi Tujh Sa Bhi Kash Tujh Ko Mile

Mudda Hum Ko Intaqam Se Hai

Sher Mere Hain Sab Khvas Pasand

Par Mujhe Guftagu Awam Se Hai

Sahal Hai ‘Meer’ Ka Samajhana Kya

Har Sukhan Usaka Ik Maqam Se Hai

Main Nashe Mein Hun

Yaaro Muje Maaf Rakho Main Nashe Mein Hun
Ab Do Tu Jaam Khali Hi Do, Main Nashe Mein Hun

Aik Aik Qart-e Dor Main Yunhi Hi Muje Bi Do
Jam-e Sharab Par Na Karo, Main Nashe Mein Hun

Masti Se Barhami Hai Meri, Guftagu Ke Bech
Jo Chaho Tum Bi Muj Ko Kahu, Main Nashe Mein Hun

Ya Hathon Hath Lo Muje, Manind Jaam-e May
Ya Thori Door Sath Chalo, Main Nashe Mein Hun

Ma’azoor Hun, Jo Paon Mere Be Tarah Pare
Tu Sargaran Tu Muj Se Na Ho, Main Nashe Mein Hun

Nazak Mazaj Aap Qayamat Hain Mir Ji
Joon Shesha Mere Munh Na Lago, Main Nashe Mein Hun

Ibtadaae Ishq Hai Rota Hai Kya

Ibtadaae Ishq Hai Rota Hai Kya,
Aage Aage Dekhiye Hota Hai Kya.

Qafile Mein Subah Ke Ek Shor Hai,
Yaani Ghaafil Ham Chale Sota Hai Kya.

Sabz Hoti Hi Nahin Yeh Sar Zamin,
Tukhm-E-Khwahish Dil Mein Tu Bota Hai Kya.

Yeh Nishaan-E-Ishq Hain Jaate Nahin,
Daagh Chhaati Ke Abas Dhota Hai Kya.

Ghairat-E-Yousaf Hai Yeh Waqt-E-Aziz,
Mir Isko Raigaan Khota Hai Kya.A

Faqiraana Aae Sadaa Kar Chale

Faqiraana Aae Sadaa Kar Chale
Miyaan Khush Raho Ham Dua Kar Chale

Jo Tujh Bin Na Jeene Ko Kahte The Ham
So Is Ahd Ko Ab Wafa Kar Chale

Koi Naumidana Karte Nigah
So Tum Ham Se Munh Bhi Chhipa Kar Chale

Bahut Aarzoo Thi Gali Ki Teri
So Yaan Se Lahu Mein Naha Kar Chale

Dikhai Diye Yun Ke Bekhud Kiya
Hamen Aap Se Bhi Juda Kar Chale

Jabin Sijda Karte Hi Karte Gayi
Haq-E-Bandgi Ham Ada Kar Chale

Prastash Ki Yaan Taeen Ke Ai But Tujhe
Nazr Mein Sabhon Ki Khuda Kar Chale

Gayi Umr Dar Band-E-Fikr-E-Ghazal
So Is Fan Ko Aisa Bara Kar Chale

Kahen Kya Jo Puchhe Koi Ham Se Mir
Jahaan Mein Tum Ae The Kya Kar Chale

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *