Faiz Ahmad Faiz

Faiz Ahmad Faiz

فیض احمد فیض

February 13, 1911 
November 20, 1984
Faiz Ahmad Faiz
Faiz Ahmad Faiz

Faiz Ahmad Faiz

Faiz Ahmad Faiz (فَیض احمد فَیض) was A greatest poet born in sialkot in Punjab . Faiz Ahmad Faiz education literature in Arabic,B.A & MA & literature in English,Master of Arts. Faiz Ahmad Faiz was nominate for Nobel Prize in litrature and he won Lenin Peace Prize in 1962 by the Soviet Union and he won highest Pakistan civil Award Nishan e Imtiaz In 1990

 

Faiz Ahmad Faiz poetry

 

Kab Raat Basar Ho Gi

Faiz Ahmad Faiz
Faiz Ahmad Faiz

Kab Thehray Ga Dard Ae Dil, Kab Raat Basar Ho Gi
Sunte Thay Wo Ayen Gay, Sunte Thay Sehar Ho Gi

Uth Kar Tu Aa Gaye Hain Teri Bazm Se

Uth Kar Tu Aa Gaye Hain Teri Bazm Se Magar
Kuch Dil Hi Janta Hai Keh Kis Dil Se Aye Hain

Dil Na Umeed Tu Nahi Nakaam Hi Tu Hai

Dil Na Umeed Tu Nahi Nakaam Hi Tu Hai
Lambi Hai Gham Hi Shaam Magar Shaam Hi Tu Hai

Ab Apna Ikhtiar Hai Chahy Jahan Chlain

Ab Apna Ikhtiar Hai Chahy Jahan Chlain
Rehbar Se Apni Rah Juda Kar Chuke Hain Ham

Gar Bazi Ishq Ki Bazi Hai

Faiz Ahmad Faiz
Faiz Ahmad Faiz

Gar Bazi Ishq Ki Bazi Hai Jo Chao Laga Do Dar Kesa
Gar Jeet Gye Tu Kya Kehne, Haare Bhi Tu Bazi Maat Nahi

Na Jane Kis Liye Umeedwar Betha Hun

Na Jane Kis Liye Umeedwar Betha Hun
Ik Aesi Rah Pe Jo Teri Rah Guzar Bhi Nahi

Raat Yun Dil Mein Teri Khoyi Hui Yaad Ayi

Raat Yun Dil Mein Teri Khoyi Hui Yaad Ayi
Jese Werane Mein Chupke Se Bahar Ayi
Jese Sehraon Mein Hole Se Chlae Bad-e Naseem
Jese Beemar Ko Bewaja Qarar A Jaye

Aur Bhi Dukh Hain Zamane Mein

Aur Bhi Dukh Hain Zamane Mein Mohabat Ke Siwa
Rahaten Aur Bhi Hain Wasal Ki Rahat Ke Siwa

Jurtay hoye dekha nahi totay hoye dil ko

Faiz Ahmad Faiz
Faiz Ahmad Faiz

Jurtay hoye dekha nahi totay hoye dil ko
Gir jayen jo ansu to uthaye nahi jatay

Aur Kya Dekhne Ko Baqi Hai

Aur Kya Dekhne Ko Baqi Hai
Aap Se Dil Laga Ke Dekh Lya

Wo Aa Rahe Hain Wo Aate Hai

Wo Aa Rahe Hain Wo Aate Hain Aa Rahe Hun Gey
Shab-e Firaq Ye Keh Kar Guzar Di Ham Ne

Ham Se Kehte Hain Chaman Wale

Ham Se Kehte Hain Chaman Wale Ghareban Chaman
Tum Koi Acha Sa Rakh Lo Apne Verane Ka Naam

Ham Aese Sada Dilon Ki

Faiz Ahmad Faiz
Faiz Ahmad Faiz

Ham Aese Sada Dilon Ki Niaz Mandi Se
Buton Ne Ki Hai Jahan Mein Khudayan Kya Kya

Yaad Aati Rahi Raat Bhar

Aap Ki Yaad Aati Rahi Raat Bhar
Chandi Dil Dukhati Rahi Raat Bhar

Awaz main thehrao tha

Awaz main thehrao tha ankhon main nami thi
Aur keh raha tha main ne sab kuch bhula dia

Shaam-e Firaq Ab Na Poch Ay

Shaam-e Firaq Ab Na Poch Ayi Aur Aa Ke Tal Gai
Dil Tha Ke Phir Behal Gya Jan Thi Ke Phir Sambhal Gai

Uth Kar Tu Aa Gye Hain Teri Bazam Se Magar

Faiz Ahmad Faiz
Faiz Ahmad Faiz

Uth Kar Tu Aa Gye Hain Teri Bazam Se Magar
Kuch Dil Hi Janta Hai Keh Kis Dil Se Aye Hain

Dil-e na umeed tu nahi

Dil-e na umeed tu nahi, nakam hi tu hai
Lambi hai gham ki shaam, magar shaam hi tu hai

Na shayar hoon main

Na shayar hoon main na shooar isqh muj ko faiz
Main tu likta hoon ke hal dil bayan kar sakoon

Tere Qol-o Qarar Se Pehle

Tere Qol-o Qarar Se Pehle
Apne Kuch Aur Bhi Sahare Thay

Tumhari Yaad Ke Jab Zakhm

Faiz Ahmad Faiz
Faiz Ahmad Faiz

Tumhari Yaad Ke Jab Zakhm Bharne Lagte Hain
Kisi Bahane Tumhein Yaad Karne Lagte Hain

Be Dam Hue bimaar dawa kiyon nahi dete

Be Dam Hue bimaar dawa kiyon nahi dete
tum ache maseha ho shafa kiyon nahi dete

Aaye toh yOon jaise hamesha thay meherbaan

AAye toh yOon jaise hamesha thay meherbaan
bhoole toh Yoon ke gooya kabhi Ashna na the

Khoof e nakami umeed hai Faiz

Faiz Ahmad Faiz
Faiz Ahmad Faiz

Khoof e nakami umeed hai Faiz
warna dil tor de talsam e majaz

THE END

____________________

Faiz Ahmad Faiz Poems

گو سب کو بہم ساغر و بادہ تو نہیں تھا

گو سب کو بہم ساغر و بادہ تو نہیں تھا
یہ شہر اداس اتنا زیادہ تو نہیں تھا

گلیوں میں پھرا کرتے تھے دو چار دوانے
ہر شخص کا صد چاک لبادہ تو نہیں تھا

منزل کو نہ پہچانے رہ عشق کا راہی
ناداں ہی سہی ایسا بھی سادہ تو نہیں تھا

تھک کر یوں ہی پل بھر کے لیے آنکھ لگی تھی
سو کر ہی نہ اٹھیں یہ ارادہ تو نہیں تھا

واعظ سے رہ و رسم رہی رند سے صحبت
فرق ان میں کوئی اتنا زیادہ تو نہیں تھا

وہ بتوں نے ڈالے ہیں وسوسے کہ دلوں سے خوف خدا گیا

وہ بتوں نے ڈالے ہیں وسوسے کہ دلوں سے خوف خدا گیا
وہ پڑی ہیں روز قیامتیں کہ خیال روز جزا گیا

جو نفس تھا خار گلو بنا جو اٹھے تھے ہاتھ لہو ہوئے
وہ نشاط آہ سحر گئی وہ وقار دست دعا گیا

نہ وہ رنگ فصل بہار کا نہ روش وہ ابر بہار کی
جس ادا سے یار تھے آشنا وہ مزاج باد صبا گیا

جو طلب پہ عہد وفا کیا تو وہ آبروئے وفا گئی
سر عام جب ہوئے مدعی تو ثواب صدق و صفا گیا

ابھی بادبان کو تہ رکھو ابھی مضطرب ہے رخ ہوا
کسی راستے میں ہے منتظر وہ سکوں جو آ کے چلا گیا

حسن مرہون جوش بادۂ ناز

حسن مرہون جوش بادۂ ناز
عشق منت کش فسون نیاز

دل کا ہر تار لرزش پیہم
جاں کا ہر رشتہ وقف سوز و گداز

سوزش درد دل کسے معلوم
کون جانے کسی کے عشق کا راز

میری خاموشیوں میں لرزاں ہے
میرے نالوں کی گم شدہ آواز

ہو چکا عشق اب ہوس ہی سہی
کیا کریں فرض ہے ادائے نماز

تو ہے اور اک تغافل پیہم
میں ہوں اور انتظار بے انداز

خوف ناکامئ امید ہے فیضؔ
ورنہ دل توڑ دے طلسم مجاز

راز الفت چھپا کے دیکھ لیا

راز الفت چھپا کے دیکھ لیا
دل بہت کچھ جلا کے دیکھ لیا

اور کیا دیکھنے کو باقی ہے
آپ سے دل لگا کے دیکھ لیا

وہ مرے ہو کے بھی مرے نہ ہوئے
ان کو اپنا بنا کے دیکھ لیا

آج ان کی نظر میں کچھ ہم نے
سب کی نظریں بچا کے دیکھ لیا

فیضؔ تکمیل غم بھی ہو نہ سکی
عشق کو آزما کے دیکھ لیا

سچ ہے ہمیں کو آپ کے شکوے بجا نہ تھے

سچ ہے ہمیں کو آپ کے شکوے بجا نہ تھے
بے شک ستم جناب کے سب دوستانہ تھے

ہاں، جو جفا بھی آپ نے کی قاعدے سے کی
ہاں، ہم ہی کاربندِ اُصولِ وفا نہ تھے

آئے تو یوں کہ جیسے ہمیشہ تھے مہرباں
بُھولے تو یوں کہ گویا کبھی آشنا نہ تھے

کیوں دادِ غم ہمیں نے طلب کی، بُرا کیا
ہم سے جہاں میں کشتۂ غم اور کیا نہ تھے

گر فکرِ زخم کی تو خطاوار ہیں کہ ہم
کیوں محوِ مدح خوبیِ تیغِ ادا نہ تھے

ہر چارہ گر کو چارہ گری سے گریز تھا
ورنہ ہمیں جو دکھ تھے ، بہت لادوا نہ تھے

لب پر ہے تلخیِ مئے ایّام، ورنہ فیض
ہم تلخیِ کلام پہ مائل ذرا نہ تھے

یک بیک شورش فغاں کی طرح

یک بیک شورش فغاں کی طرح
فصل گل آئی امتحاں کی طرح

صحن گلشن میں بہر مشتاقاں
ہر روش کھنچ گئی کماں کی طرح

پھر لہو سے ہر ایک کاسۂ داغ
پر ہوا جام ارغواں کی طرح

یاد آیا جنون گم گشتہ
بے طلب قرض دوستاں کی طرح

جانے کس پر ہو مہرباں قاتل
بے سبب مرگ ناگہاں کی طرح

ہر صدا پر لگے ہیں کان یہاں
دل سنبھالے رہو زباں کی طرح

نہ گنواؤ ناوک نیم کش دل ریزہ ریزہ گنوا دیا

نہ گنواؤ ناوک نیم کش دل ریزہ ریزہ گنوا دیا
جو بچے ہیں سنگ سمیٹ لو تن داغ داغ لٹا دیا

مرے چارہ گر کو نوید ہو صف دشمناں کو خبر کرو
جو وہ قرض رکھتے تھے جان پر وہ حساب آج چکا دیا

کرو کج جبیں پہ سر کفن مرے قاتلوں کو گماں نہ ہو
کہ غرور عشق کا بانکپن پس مرگ ہم نے بھلا دیا

ادھر ایک حرف کہ کشتنی یہاں لاکھ عذر تھا گفتنی
جو کہا تو سن کے اڑا دیا جو لکھا تو پڑھ کے مٹا دیا

جو رکے تو کوہ گراں تھے ہم جو چلے تو جاں سے گزر گئے
رہ یار ہم نے قدم قدم تجھے یادگار بنا دیا

آپ کی یاد آتی رہی رات بھر

آپ کی یاد آتی رہی رات بھر
چاندنی دل دکھاتی رہی رات بھر

گاہ جلتی ہوئی گاہ بجھتی ہوئی
شمع غم جھلملاتی رہی رات بھر

کوئی خوشبو بدلتی رہی پیرہن
کوئی تصویر گاتی رہی رات بھر

پھر صبا سایۂ شاخ گل کے تلے
کوئی قصہ سناتی رہی رات بھر

جو نہ آیا اسے کوئی زنجیر در
ہر صدا پر بلاتی رہی رات بھر

ایک امید سے دل بہلتا رہا
اک تمنا ستاتی رہی رات بھر

کس حرف پہ تو نے گوشۂ لب اے جان جہاں غماز کیا

کس حرف پہ تو نے گوشۂ لب اے جان جہاں غماز کیا
اعلان جنوں دل والوں نے اب کے بہ ہزار انداز کیا

سو پیکاں تھے پیوست گلو جب چھیڑی شوق کی لے ہم نے
سو تیر ترازو تھے دل میں جب ہم نے رقص آغاز کیا

بے حرص و ہوا بے خوف و خطر اس ہاتھ پہ سر اس کف پہ جگر
یوں کوئے صنم میں وقت سفر نظارۂ بام ناز کیا

جس خاک میں مل کر خاک ہوئے وہ سرمۂ چشم خلق بنی
جس خار پہ ہم نے خوں چھڑکا ہم رنگ گل طناز کیا

لو وصل کی ساعت آ پہنچی پھر حکم حضوری پر ہم نے
آنکھوں کے دریچے بند کیے اور سینے کا در باز کیا

یہ کس خلش نے پھر اس دل میں آشیانہ کیا

یہ کس خلش نے پھر اس دل میں آشیانہ کیا
پھر آج کس نے سخن ہم سے غائبانہ کیا

غم جہاں ہو رخ یار ہو کہ دست عدو
سلوک جس سے کیا ہم نے عاشقانہ کیا

تھے خاک راہ بھی ہم لوگ قہر طوفاں بھی
سہا تو کیا نہ سہا اور کیا تو کیا نہ کیا

خوشا کہ آج ہر اک مدعی کے لب پر ہے
وہ راز جس نے ہمیں راندۂ زمانہ کیا

وہ حیلہ گر جو وفا جو بھی ہے جفاخو بھی
کیا بھی فیضؔ تو کس بت سے دوستانہ کیا

کس شہر نہ شہرہ ہوا نادانئ دل کا

کس شہر نہ شہرہ ہوا نادانئ دل کا
کس پر نہ کھلا راز پریشانئ دل کا

آؤ کریں محفل پہ زر زخم نمایاں
چرچا ہے بہت بے سر و سامانی دل کا

دیکھ آئیں چلو کوئے نگاراں کا خرابہ
شاید کوئی محرم ملے ویرانئ دل کا

پوچھو تو ادھر تیر فگن کون ہے یارو
سونپا تھا جسے کام نگہبانئ دل کا

دیکھو تو کدھر آج رخ باد صبا ہے
کس رہ سے پیام آیا ہے زندانئ دل کا

اترے تھے کبھی فیضؔ وہ آئینۂ دل میں
عالم ہے وہی آج بھی حیرانئ دل کا

وہ بتوں نے ڈالے ہیں وسوسے کہ دلوں سے خوف خدا گیا

وہ بتوں نے ڈالے ہیں وسوسے کہ دلوں سے خوف خدا گیا
وہ پڑی ہیں روز قیامتیں کہ خیال روز جزا گیا

جو نفس تھا خار گلو بنا جو اٹھے تھے ہاتھ لہو ہوئے
وہ نشاط آہ سحر گئی وہ وقار دست دعا گیا

نہ وہ رنگ فصل بہار کا نہ روش وہ ابر بہار کی
جس ادا سے یار تھے آشنا وہ مزاج باد صبا گیا

جو طلب پہ عہد وفا کیا تو وہ آبروئے وفا گئی
سر عام جب ہوئے مدعی تو ثواب صدق و صفا گیا

ابھی بادبان کو تہ رکھو ابھی مضطرب ہے رخ ہوا
کسی راستے میں ہے منتظر وہ سکوں جو آ کے چلا گیا

یک بیک شورش فغاں کی طرح

یک بیک شورش فغاں کی طرح
فصل گل آئی امتحاں کی طرح

صحن گلشن میں بہر مشتاقاں
ہر روش کھنچ گئی کماں کی طرح

پھر لہو سے ہر ایک کاسۂ داغ
پر ہوا جام ارغواں کی طرح

یاد آیا جنون گم گشتہ
بے طلب قرض دوستاں کی طرح

جانے کس پر ہو مہرباں قاتل
بے سبب مرگ ناگہاں کی طرح

ہر صدا پر لگے ہیں کان یہاں
دل سنبھالے رہو زباں کی طرح

نہ اب رقیب نہ ناصح نہ غم گسار کوئی

نہ اب رقیب نہ ناصح نہ غم گسار کوئی
تم آشنا تھے تو تھیں آشنائیاں کیا کیا

جدا تھے ہم تو میسر تھیں قربتیں کتنی
بہم ہوئے تو پڑی ہیں جدائیاں کیا کیا

پہنچ کے در پہ ترے کتنے معتبر ٹھہرے
اگرچہ رہ میں ہوئیں جگ ہنسائیاں کیا کیا

ہم ایسے سادہ دلوں کی نیاز مندی سے
بتوں نے کی ہیں جہاں میں خدائیاں کیا کیا

ستم پہ خوش کبھی لطف و کرم سے رنجیدہ
سکھائیں تم نے ہمیں کج ادائیاں کیا کیا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *