ALLAMA IQBAL

ALLAMA IQBAL

(علامہ اقبال)

November 9, 1877

April 21, 1938

Allama Iqbal
Allama Iqbal

Allama Iqbal

Allama Iqbal (علامہ اقبال)was born on 9th november 1877 in an kashmiri family in sialkot he is the best poet in sub continent he is also known as poet of east (شاعرِمشرق) for his brilliant amazing poetry.Iqbal died in 21st april 1938 age of 60 years his tomb in Lahore punjab in Shahi qilla Pakistan.

 

Allama Iqbal poetry

 

nahi tera nashe man qasre sultani ke gunbad per

 

ALLAMA IQBAL
ALLAMA IQBAL

nahi tera nashe man qasre sultani ke gunbad per
toh shaheen hai basera kar paharoon ki chatanoo mein

uqaabi rooh jab bedaar hoti ha jawanoon mein

uqaabi rooh jab bedaar hoti ha jawanoon mein

nazar aati hai un ko apni manzil aasmano mein

bharri bazm main raaz ki baat keh di

bharri bazm main raaz ki baat keh di
bara be adab hoon saza chahta hoon

ishq tere intiha ishq meri inteha

 

ishq tere intiha ishq meri inteha
tu bhi abhi na tamam main bhi abhi na tamam

apna koi marta hai toh rootay ho tarap kar

Allama Iqbal
Allama Iqbal

apna koi marta hai toh rootay ho tarap kar
par sabt e peghambar ka gham nahi karte

himmat ho to mehshar main peghambar S.A sey yeh kehna
hum zinda javed ka matam nahi karte

na ashq bahao kay nahi zaib ye tum ko
qaatil kabhi maqtool ka matam nahi karte

jinhein mein dhondta tha aasmanoon main zameenoon mein

jinhein mein dhondta tha aasmanoon main zameenoon mein
woh nikle mere zulmat khana e dil kay makinoon mein

uss qoum ko shamsher ki hajat nahi rehti

uss qoum ko shamsher ki hajat nahi rehti
ho jiss k jawano ki khudi soorat e faulaad

yeh gharhi mehshar ki hai tu arsa e mehshar mein hai

Allama Iqbal
Allama Iqbal

yeh gharhi mehshar ki hai tu arsa e mehshar mein hai
paish kar ghaafil,ammal agar koi daftar mein hai

dil hai musalman mera na tera

dil hai musalman mera na tera
tu bhi namazi main bhi namazi

zara si baat thi andesha e ujam ne isse

zara si baat thi andesha e ujam ne isse
barha dia hai faqt zaib e dastan kay liye

husn e kirdaar se noor e mujassim hoja

ALLAMA IQBAL
ALLAMA IQBAL

husn e kirdaar se noor e mujassim hoja
kay iblees bhi tujhe dekhe toh musalman hojaye

apne kirdaar pay daal kay parda Iqbal

apne kirdaar pay daal kay parda Iqbal
har shakhs keh raha hai zamana kharab hai

burra samjhoon unhein,mujh sey toh aesa ho nahi sakta

burra samjhoon unhein,mujh sey toh aesa ho nahi sakta
kay main khud bhi toh hoon iqbalapne nuqta cheenoon ka

uss daur ki zulmat main har qalb pareshaan ko

Allama Iqbal
Allama Iqbal

uss daur ki zulmat main har qalb pareshaan ko
woh daagh e mohabbat de jo chand ko sharma de

kaafir ki yeh pehchaan k afaaq mein gum hai

kaafir ki yeh pehchaan k afaaq mein gum hai
momin ki yeh pehchan k gum uss mein aafaq

khuddi ko kar buland itna k har taqdeer sey pehle

khuddi ko kar buland itna k har taqdeer sey pehle
khuda bande sey khud pooche bata teri raza kia

ishq qaatil sey bhi, maqtool sey hamdardi bhi

ishq qaatil sey bhi, maqtool sey hamdardi bhi
yeh bata kis sey muhabbat ki jazza maange ga

sajda khaliq ko bhi iblees se yaraana bhi
hashar mein kis sey aqeedat ka sila mange ga

kiyoon mantein mangta hai Auroon ke darbaar sey iqbal

Allama Iqbal
Allama Iqbal

kiyoon mantein mangta hai Auroon ke darbaar sey iqbal
woh konsa kaam hai jo hota nahi tere parwardigar se

sodagri nahi yeh ibadat khuda ki hai

sodagri nahi yeh ibadat khuda ki hai
Ae be khabar jaza ki tamanna bhi chor de

bistar se uth kar masjid tak jaa na sakay iqbal

bistar se uth kar masjid tak jaa na sakay iqbal
khuwahish rakhte hain,qabar se uth kar jannat main jaane ki

ilm mein bhi suroor hai lekin

Allama Iqbal
Allama Iqbal
ilm mein bhi suroor hai lekin
yeh woh jannat hai jiss mein hoor nahi

Hansi Aati Hai Mujhe Hasrate Insaan Par

Hansi Aati Hai Mujhe Hasrate Insaan Par
Gunah Karta Hai Khud Aur Lanat Bhejta Hai Saitan Par

andheeri shab hai,judaa apne qaafle sey hai tu

andheeri shab hai,judaa apne qaafle sey hai tu
tere liye hai mera shaula e nawa , qandeel

chore europe kay liye raqs e badan kay kham o pech

chore europe kay liye raqs e badan kay kham o pech
rooh ke raqs mein ha Boo e lillahi

dunya kya se kya iqbal

 

Aankh Jo Kuch Dekhti Hai Lab Pe Aa Sakta Nahi
Mahv-e Hairat Hoon Kay Duniya Kiya Se Kiya Ho Jaye Gi

Taleem Bi Fitna

Allama Iqbal
Allama Iqbal

Allah Se Kare Door Tu Taleem Bhi Fitna
Imlak Bhi Aulad Bi Jageer Bhi Fitna
Na haq Kay Liye Uthe Toh Shamsher Bhi Fitna
Shamsher Hi Kya Nara-e Taqbeer Bhi Fitna

Ae Gardish-E Ayam Tu

Haan Dikha De Ae Tasuwar Phir Wo Subah Sham Tu
Dorh Pechay Ki Taraf Ae Gardish-E Ayaam Tu

Anokhi Wazaa Hai Saare Zamane

Anokhi Wazaa Hai Sare Zamane Sey Nirale Hain
Ye Aashiq Kon Se Basti Key Ya Rab Rehne Wale Hain

Banda-E Mazdoor Kay Auqat

Tu Qadir Aur Adil Hai Par Tere Jahaan Mein
Hai Talkh Bohut Banda-E Mazdoor Kay Auqat

Apne Mann Mein Dob Kar

Allama Iqbal
Allama Iqbal

Apne Mann Mein Doob Kar Paa Jaa Suragh-E Zindagi
Tu Agar Mera Nahi Banta Na Ban Apna Tu Ban

Tera Imam Bay Hazoor

Tera Imam Be Huzoor Teri Namaz Bay Suroor
Aesi Namaz Se Guzar Aese Imam Se Guzar

Rooz Hisaab Jab Mera Pesh Ho

 

Roz-e Hisab Jab Mera Pesh Ho Daftar-e Amal
Aap Bhi Sharam-Sar Ho Mujh Ko Bhi Sharam-Sar Karein

Jafa jo ishq main

Jafa jo ishq main hoti hai wo jafa hi nahi
Sitam na ho tu mohabbat main kuch maza hi nahi

Hazaroon Saal Nargis Apni

 

Hazaroon Saal Nargis Apni Be Noori Pe Roti Hai
Bari Mushkil Sey Hota Hai Chaman Mein Deda War Paida

Ishq Bhi Ho Hijab Mein

 

ALLAMA IQBAL

Ye Tu Khud Aashkaar Ho Ye Muje Aashkaar Kar

THE END

___________________

حصہ نظم

 ALLAMA IQBAL POEMS

 

شاہيں

الفاظ و معاني ميں تفاوت نہيں ليکن
ملا کي اذاں اور مجاہد کي اذاں اور

پرواز ہے دونوں کي اسي ايک فضا ميں
کرگس کا جہاں اور ہے ، شاہيں کا جہاں اور

 

خردمندوں سے کيا پوچھوں

خردمندوں سے کيا پوچھوں کہ ميری ابتدا کيا ہے
کہ ميں اس فکر ميں رہتا ہوں ، ميری انتہا کيا ہے

اگر ہوتا وہ مجذوب فرنگی اس زمانے ميں
تو اقبال اس کو سمجھاتا مقام کبريا کيا ہے

ہے یاد مجھے نکتۂ سلمان خوش آہنگ

ہے یاد مجھے نکتۂ سلمان خوش آہنگ
دنیا نہیں مردان جفاکش کے لیے تنگ

چیتے کا جگر چاہیئے شاہیں کا تجسس
جی سکتے ہیں بے روشنی دانش و فرہنگ

کر بلبل و طاؤس کی تقلید سے توبہ
بلبل فقط آواز ہے طاؤس فقط رنگ

یہ پیران کلیسا و حرم اے وائے مجبوری

یہ پیران کلیسا و حرم اے وائے مجبوری
صلہ ان کی کد و کاوش کا ہے سینوں کی بے نوری

یقیں پیدا کر اے ناداں یقیں سے ہاتھ آتی ہے
وہ درویشی کہ جس کے سامنے جھکتی ہے فغفوری

کبھی حیرت کبھی مستی کبھی آہ سحرگاہی
بدلتا ہے ہزاروں رنگ میرا درد مہجوری

حد ادراک سے باہر ہیں باتیں عشق و مستی کی
سمجھ میں اس قدر آیا کہ دل کی موت ہے دوری

وہ اپنے حسن کی مستی سے ہیں مجبور پیدائی
مری آنکھوں کی بینائی میں ہیں اسباب مستوری

کوئی تقدیر کی منطق سمجھ سکتا نہیں ورنہ
نہ تھے ترکان عثمانی سے کم ترکان تیموری

فقیران حرم کے ہاتھ اقبالؔ آ گیا کیونکر
میسر میر و سلطاں کو نہیں شاہین کافوری

یہ دیر کہن کیا ہے انبار خس و خاشاک

یہ دیر کہن کیا ہے انبار خس و خاشاک
مشکل ہے گزر اس میں بے نالۂ آتش ناک

نخچیر محبت کا قصہ نہیں طولانی
لطف خلش پیکاں آسودگئ فتراک

کھویا گیا جو مطلب ہفتاد و دو ملت میں
سمجھے گا نہ تو جب تک بے رنگ نہ ہو ادراک

اک شرع مسلمانی اک جذب مسلمانی
ہے جذب مسلمانی سر فلک الافلاک

اے رہرو فرزانہ بے جذب مسلمانی
نے راہ عمل پیدا نے شاخ یقیں نمناک

رمزیں ہیں محبت کی گستاخی و بیباکی
ہر شوق نہیں گستاخ ہر جذب نہیں بیباک

فارغ تو نہ بیٹھے گا محشر میں جنوں میرا
یا اپنا گریباں چاک یا دامن یزداں چاک

میر سپاہ ناسزا لشکریاں شکستہ صف

میر سپاہ ناسزا لشکریاں شکستہ صف
آہ وہ تیر نیم کش جس کا نہ ہو کوئی ہدف

تیرے محیط میں کہیں گوہر زندگی نہیں
ڈھونڈ چکا میں موج موج دیکھ چکا صدف صدف

عشق بتاں سے ہاتھ اٹھا اپنی خودی میں ڈوب جا
نقش و نگار دیر میں خون جگر نہ کر تلف

کھول کے کیا بیاں کروں سر مقام مرگ و عشق
عشق ہے مرگ باشرف مرگ حیات بے شرف

صحبت پیر روم سے مجھ پہ ہوا یہ راز فاش
لاکھ حکیم سربجیب ایک کلیم سر بکف

مثل کلیم ہو اگر معرکہ آزما کوئی
اب بھی درخت طور سے آتی ہے بانگ لاتخف

خیرہ نہ کر سکا مجھے جلوۂ دانش فرنگ
سرمہ ہے میری آنکھ کا خاک مدینہ و نجف

کمال جوش جنوں میں رہا میں گرم طواف

کمال جوش جنوں میں رہا میں گرم طواف
خدا کا شکر سلامت رہا حرم کا غلاف

یہ اتفاق مبارک ہو مومنوں کے لیے
کہ یک زباں ہیں فقیہان شہر میرے خلاف

تڑپ رہا ہے فلاطوں میان غیب و حضور
ازل سے اہل خرد کا مقام ہے اعراف

ترے ضمیر پہ جب تک نہ ہو نزول کتاب
گرہ کشا ہے نہ رازیؔ نہ صاحب کشافؔ

سرور و سوز میں ناپائیدار ہے ورنہ
مے فرنگ کا تہ جرعہ بھی نہیں ناصاف

 

اصل مرد مجاحد

صوفی کی طریقت میں فقط مستی احوال
ملا کی شریعت میں فقط مستی گفتار

شاعر کی نوا مردہ و افسردہ و بے ذوق
افکار میں سرمست، نہ خوابیدہ نہ بیدار

وہ مرد مجاہد نظر آتا نہیں مجھ کو
ہو جس کے رگ و پے میں فقط مستی کردا

یا رب یہ جہان گزراں خوب ہے لیکن

یا رب یہ جہان گزراں خوب ہے لیکن
کیوں خوار ہیں مردان صفا کیش و ہنر مند

گو اس کی خدائی میں مہاجن کا بھی ہے ہاتھ
دنیا تو سمجھتی ہے فرنگی کو خداوند

تو برگ گیا ہے نہ وہی اہل خرد را
او کشت گل و لالہ بہ بخشد بہ خرے چند

حاضر ہیں کلیسا میں کباب و مئے گلگوں
مسجد میں دھرا کیا ہے بجز موعظہ و پند

احکام ترے حق ہیں مگر اپنے مفسر
تاویل سے قرآں کو بنا سکتے ہیں پازند

فردوس جو تیرا ہے کسی نے نہیں دیکھا
افرنگ کا ہر قریہ ہے فردوس کی مانند

مدت سے ہے آوارۂ افلاک مرا فکر
کر دے اسے اب چاند کے غاروں میں نظر بند

فطرت نے مجھے بخشے ہیں جوہر ملکوتی
خاکی ہوں مگر خاک سے رکھتا نہیں پیوند

درویش خدا مست نہ شرقی ہے، نہ غربی
گھر میرا نہ دلی نہ صفاہاں نہ سمرقند

کہتا ہوں وہی بات سمجھتا ہوں جسے حق
نے ابلۂ مسجد ہوں نہ تہذیب کا فرزند

اپنے بھی خفا مجھ سے ہیں بیگانے بھی ناخوش
میں زہر ہلاہل کو کبھی کہہ نہ سکا قند

مشکل ہے اک بندۂ حق بین و حق اندیش
خاشاک کے تودے کو کہے کوہ دماوند

ہوں آتش نمرود کے شعلوں میں بھی خاموش
میں بندۂ مومن ہوں نہیں دانۂ اسپند

پرسوز نظر باز و نکوبین و کم آرزو
آزاد و گرفتار و تہی کیسہ و خورسند

ہر حال میں میرا دل بے قید ہے خرم
کیا چھینے گا غنچے سے کوئی ذوق شکرخند

چپ رہ نہ سکا حضرت یزداں میں بھی اقبالؔ
کرتا کوئی اس بندۂ گستاخ کا منہ بند

فطرت کو خرد کے روبرو

فطرت کو خرد کے روبرو
تسخیر مقام رنگ و بو کر

تو اپنی خودی کو کھو چکا ہے
کھوئی ہوئی شے کی جستجو کر

تاروں کی فضا ہے بیکرانہ
تو بھی یہ مقام آرزو کر

عریاں ہیں ترے چمن کی حوریں
چاک گل و لالہ کو رفو کر

بے ذوق نہیں اگرچہ فطرت
جو اس سے نہ ہو سکا وہ تو کر

گیسوئے تابدار کو اور بھی تابدار کر

گیسوئے تابدار کو اور بھی تابدار کر
ہوش و خرد شکار کر قلب و نظر شکار کر

عشق بھی ہو حجاب میں حسن بھی ہو حجاب میں
یا تو خود آشکار ہو یا مجھے آشکار کر

تو ہے محیط بیکراں میں ہوں ذرا سی آب جو
یا مجھے ہمکنار کر یا مجھے بے کنار کر

میں ہوں صدف تو تیرے ہاتھ میرے گہر کی آبرو
میں ہوں خزف تو تو مجھے گوہر شاہوار کر

نغمۂ نوبہار اگر میرے نصیب میں نہ ہو
اس دم نیم سوز کو طائرک بہار کر

باغ بہشت سے مجھے حکم سفر دیا تھا کیوں
کار جہاں دراز ہے اب مرا انتظار کر

روز حساب جب مرا پیش ہو دفتر عمل
آپ بھی شرمسار ہو مجھ کو بھی شرمسار کر

عقل و دل

عقل نے ايک دن يہ دل سے کہا
بھولے بھٹکے کی رہنما ہوں ميں
ہوں زميں پر ، گزر فلک پہ مرا
ديکھ تو کس قدر رسا ہوں ميں
کام دنيا ميں رہبری ہے مرا
مثل خضر خجستہ پا ہوں ميں
ہوں مفسر کتاب ہستی کی
مظہر شان کبريا ہوں ميں
بوند اک خون کی ہے تو ليکن
غيرت لعل بے بہا ہوں ميں
دل نے سن کر کہا يہ سب سچ ہے
پر مجھے بھی تو ديکھ ، کيا ہوں ميں

راز ہستی کو تو سمجھتی ہے
اور آنکھوں سے ديکھتا ہوں ميں

ہے تجھے واسطہ مظاہر سے
اور باطن سے آشنا ہوں ميں
علم تجھ سے تو معرفت مجھ سے
تو خدا جو ، خدا نما ہوں ميں
علم کي انتہا ہے بے تابی
اس مرض کی مگر دوا ہوں ميں
شمع تو محفل صداقت کی
حسن کی بزم کا ديا ہوں ميں
تو زمان و مکاں سے رشتہ بپا
طائر سدرہ آشنا ہوں ميںکس بلندی پہ ہے مقام مرا
عرش رب جليل کا ہوں ميں

شمع و پروانہ

پروانہ تجھ سے کرتا ہے اے شمع پيار کيوں
يہ جان بے قرار ہے تجھ پر نثار کيوں
سيماب وار رکھتی ہے تيری ادا اسے
آداب عشق تو نے سکھائے ہيں کيا اسے؟
کرتا ہے يہ طواف تری جلوہ گاہ کا
پھونکا ہوا ہے کيا تری برق نگاہ کا؟
آزار موت ميں اسے آرام جاں ہے کيا؟
شعلے ميں تيرے زندگی جاوداں ہے کيا؟
غم خانہ جہاں ميں جو تيری ضيا نہ ہو
اس تفتہ دل کا نخل تمنا ہرا نہ ہو
گرنا ترے حضور ميں اس کی نماز ہے
ننھے سے دل ميں لذت سوز و گداز ہے
کچھ اس ميں جوش عاشق حسن قديم ہے
چھوٹا سا طور تو يہ ذرا سا کليم ہے
پروانہ ، اور ذوق تماشائے روشنی
کيڑا ذرا سا ، اور تمنائے روشنی

پر ندے کی فر ياد

آتا ہے ياد مجھ کو گزرا ہوا زمانا
وہ باغ کی بہاريں وہ سب کا چہچہانا
آزادياں کہاں وہ اب اپنے گھونسلے کی
اپنی خوشی سے آنا اپنی خوشی سے جانا
لگتی ہے چوٹ دل پر ، آتا ہے ياد جس دم
شبنم کے آنسوئوں پر کليوں کا مسکرانا
وہ پياری پياری صورت ، وہ کامنی سی مورت
آباد جس کے دم سے تھا ميرا آشيانا
آتی نہيں صدائيں اس کی مرے قفس ميں
ہوتی مری رہائی اے کاش ميرے بس ميں
کيا بد نصيب ہوں ميں گھر کو ترس رہا ہوں
ساتھی تو ہيں وطن ميں ، ميں قيد ميں پڑا ہوں
آئی بہار کلياں پھولوں کی ہنس رہی ہيں
ميں اس اندھيرے گھر ميں قسمت کو رو رہا ہوں

اس قيد کا الہی! دکھڑا کسے سنائوں
ڈر ہے يہيں قفسں ميں ميں غم سے مر نہ جاؤں

جب سے چمن چھٹا ہے ، يہ حال ہو گيا ہے
دل غم کو کھا رہا ہے ، غم دل کو کھا رہا ہے
گانا اسے سمجھ کر خوش ہوں نہ سننے والے
دکھے ہوئے دلوں کی فرياد يہ صدا ہے

آزاد مجھ کو کر دے ، او قيد کرنے والے!
ميں بے زباں ہوں قيدی ، تو چھوڑ کر دعا لے

ہمد ر د ی

ٹہنی پہ کسی شجر کی تنہا
بلبل تھا کوئی اداس بيٹھا
کہتا تھا کہ رات سر پہ آئی
اڑنے چگنے ميں دن گزارا
پہنچوں کس طرح آشياں تک
ہر چيز پہ چھا گيا اندھيرا
سن کر بلبل کی آہ و زاری
جگنو کوئی پاس ہی سے بولا
حاضر ہوں مدد کو جان و دل سے
کيڑا ہوں اگرچہ ميں ذرا سا
کيا غم ہے جو رات ہے اندھيری
ميں راہ ميں روشنی کروں گا
اللہ نے دی ہے مجھ کو مشعل
چمکا کے مجھے ديا بنايا
ہيں لوگ وہی جہاں ميں اچھے
آتے ہيں جو کام دُوسرں کے

ايک گائے اور بکری

اک چراگاہ ہری بھری تھی کہيں
تھی سراپا بہار جس کی زميں
کيا سماں اس بہار کا ہو بياں
ہر طرف صاف ندياں تھيں رواں
تھے اناروں کے بے شمار درخت
اور پيپل کے سايہ دار درخت
ٹھنڈی ٹھنڈی ہوائيں آتی تھيں
طائروں کی صدائيں آتی تھيں
کسی ندی کے پاس اک بکری
چرتے چرتے کہيں سے آ نکلی
جب ٹھہر کر ادھر ادھر ديکھا
پاس اک گائے کو کھڑے پايا
پہلے جھک کر اسے سلام کيا
پھر سليقے سے يوں کلام کيا
کيوں بڑی بی! مزاج کيسے ہيں
گائے بولی کہ خير اچھے ہيں
کٹ رہی ہے بری بھلی اپنی
ہے مصيبت ميں زندگی اپنی
جان پر آ بنی ہے ، کيا کہيے
اپني قسمت بري ہے ، کيا کہيے
ديکھتی ہوں خدا کی شان کو ميں
رو رہی ہُوں بُروں کی جان کو ميں
زور چلتا نہيں غريبوں کا
پيش آيا لکھا نصيبوں کا
آدمی سے کوئی بھلا نہ کرے
اس سے پالا پڑے ، خدا نہ کرے
دودھ کم دوں تو بُڑبُڑاتا ہے
ہوں جو دُبلی تو بيچ کھاتا ہے
ہتھکنڈوں سے غلام کرتا ہے
کن فريبوں سے رام کرتا ہے
اس کے بچوں کو پالتی ہوں ميں
دودھ سے جان ڈالتی ہوں ميں
بدلے نيکی کے يہ برائی ہے
ميرے اللہ! تري دہائی ہے
سن کے بکری يہ ماجرا سارا
بولی ، ايسا گلہ نہيں اچھابات سچی ہے بے مزا لگتی
ميں کہوں گی مگر خدا لگتیيہ چراگہ ، يہ ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا
يہ ہری گھاس اور يہ سايا
ايسی خوشياں ہميں نصيب کہاں
يہ کہاں ، بے زباں غريب کہاں!
يہ مزے آدمی کے دم سے ہيں
لطف سارے اسی کے دم سے ہيں
اس کے دم سے ہے اپنی آبادی
قيد ہم کو بھلی ، کہ آزادی
سو طرح کا بنوں ميں ہے کھٹکا
واں کی گزران سے بچائے خدا
ہم پہ احسان ہے بڑا اس کا
ہم کو زيبا نہيں گلا اس کا
قدر آرام کی اگر سمجھو
آدمی کا کبھی گلہ نہ کرو
گائے سن کر يہ بات شرمائی
آدمی کے گلے سے پچھتائی
دل ميں پرکھا بھلا برا اس نے
اور کچھ سوچ کر کہا اس نے
يوں تو چھوٹی ہے ذات بکری کی
دل کو لگتی ہے بات بکری کی

ايک پہا ڑ اور گلہری

کوئی پہاڑ يہ کہتا تھا اک گلہری سے
تجھے ہو شرم تو پانی ميں جا کے ڈوب مرے
ذرا سی چيز ہے ، اس پر غرور ، کيا کہنا
يہ عقل اور يہ سمجھ ، يہ شعور ، کيا کہنا !
خدا کی شان ہے ناچيز چيز بن بيٹھيں
جو بے شعور ہوں يوں باتميز بن بيٹھيں
تری بساط ہے کيا ميری شان کے آگے
زميں ہے پست مری آن بان کے آگے

جو بات مجھ ميں ہے ، تجھ کو وہ ہے نصيب کہاں
بھلا پہاڑ کہاں جانور غريب کہاں

کہا يہ سن کے گلہری نے ، منہ سنبھال ذرا
يہ کچی باتيں ہيں دل سے انھيں نکال ذرا
جو ميں بڑی نہيں تيری طرح تو کيا پروا
نہيں ہے تو بھی تو آخر مری طرح چھوٹا
ہر ايک چيز سے پيدا خدا کی قدرت ہے
کوئی بڑا ، کوئی چھوٹا ، يہ اس کی حکمت ہے
بڑا جہان ميں تجھ کو بنا ديا اس نے
مجھے درخت پہ چڑھنا سکھا ديا اس نے
قدم اٹھانے کی طاقت نہيں ذرا تجھ ميں
نری بڑائی ہے ، خوبی ہے اور کيا تجھ ميں
جو تو بڑا ہے تو مجھ سا ہنر دکھا مجھ کو
يہ چھاليا ہی ذرا توڑ کر دکھا مجھ کونہيں ہے چيز نکمی کوئی زمانے ميں
کوئی برا نہيں قدرت کے کارخانے ميں

ايک مکڑا اور مکھی

اک دن کسی مکھی سے يہ کہنے لگا مکڑا
اس راہ سے ہوتا ہے گزر روز تمھارا
ليکن مری کٹيا کی نہ جاگی کبھی قسمت
بھولے سے کبھی تم نے يہاں پاؤں نہ رکھا
غيروں سے نہ مليے تو کوئی بات نہيں ہے
اپنوں سے مگر چاہيے يُوں کھنچ کے نہ رہنا
آؤ جو مرے گھر ميں تو عزت ہے يہ ميری
وہ سامنے سيڑھی ہے جو منظور ہو آنا
مکھي نے سُنی بات جو مکڑے کی تو بولی
حضرت! کسی نادان کو ديجے گا يہ دھوکا
اس جال ميں مکھی کبھی آنے کی نہيں ہے
جو آپ کی سيڑھی پہ چڑھا ، پھر نہيں اترا
مکڑے نے کہا واہ! فريبی مجھے سمجھے
تم سا کوئی نادان زمانے ميں نہ ہو گا
منظور تمھاری مجھے خاطر تھی وگرنہ
کچھ فائدہ اپنا تو مرا اس ميں نہيں تھا
اڑتی ہوئی آئی ہو خدا جانے کہاں سے
ٹھہرو جو مرے گھر ميں تو ہے اس ميں بُرا کيا!
اس گھر ميں کئی تم کو دکھانے کی ہيں چيزيں
باہر سے نظر آتا ہے چھوٹی سی يہ کٹيا
لٹکے ہوئے دروازوں پہ باريک ہيں پردے
ديواروں کو آئينوں سے ہے ميں نے سجايا
مہمانوں کے آرام کو حاضر ہيں بچھونے
ہر شخص کو ساماں يہ ميسر نہيں ہوتا
مکھی نے کہا خير ، يہ سب ٹھيک ہے ليکن
ميں آپ کے گھر آئوں ، يہ اميد نہ رکھنا
ان نرم بچھونوں سے خدا مجھ کو بچائے
سو جائے کوئی ان پہ تو پھر اُٹھ نہيں سکتا
مکڑے نے کہا دل ميں سنی بات جو اس کی
پھانسوں اسے کس طرح يہ کم بخت ہے دانا
سو کام خوشامد سے نکلتے ہيں جہاں ميں
ديکھو جسے دنيا ميں خوشامد کا ہے بندا
يہ سوچ کے مکھی سے کہا اس نے بڑی بی !
اللہ نے بخشا ہے بڑا آپ کو رُتبا
ہوتی ہے اُسے آپ کی صورت سے محبت
ہو جس نے کبھی ايک نظر آپ کو ديکھا
آنکھيں ہيں کہ ہيرے کی چمکتی ہوئی کنياں
سر آپ کا اللہ نے کلغی سے سجايا
يہ حُسن ، يہ پوشاک ، يہ خوبی ، يہ صفائی
پھر اس پہ قيامت ہے يہ اُڑتے ہوئے گانا
مکھی نے سُنی جب يہ خوشامد تو پسيجی
بولی کہ نہيں آپ سے مجھ کو کوئی کھٹکا
انکار کی عادت کو سمجھتی ہوں برا ميں
سچ يہ ہے کہ دل توڑنا اچھا نہيں ہوتا
يہ بات کہی اور اڑی اپنی جگہ سے
پاس آئی تو مکڑے نے اچھل کر اسے پکڑا
بھوکا تھا کئی روز سے اب ہاتھ جو آئی
آرام سے گھر بيٹھ کے مکھی کو اڑايا

ايک پرندہ اور جگنو

سر شام ايک مرغ نغمہ پيرا
کسی ٹہنی پہ بيٹھا گا رہا تھا
چمکتی چيز اک ديکھی زميں پر
اڑا طائر اسے جگنو سمجھ کر
کہا جگنو نے او مرغ نواريز!
نہ کر بے کس پہ منقار ہوس تيز
تجھے جس نے چہک ، گل کو مہک دی
اسی اللہ نے مجھ کو چمک دی
لباس نور ميں مستور ہوں ميں
پتنگوں کے جہاں کا طور ہوں ميں
چہک تيری بہشت گوش اگر ہے
چمک ميری بھی فردوس نظر ہے
پروں کو ميرے قدرت نے ضيا دی
تجھے اس نے صدائے دل ربا دی
تری منقار کو گانا سکھايا
مجھے گلزار کی مشعل بنايا
چمک بخشی مجھے، آواز تجھ کو
ديا ہے سوز مجھ کو، ساز تجھ کو
مخالف ساز کا ہوتا نہيں سوز
جہاں ميں ساز کا ہے ہم نشيں سوز
قيام بزم ہستی ہے انھی سے
ظہور اوج و پستی ہے انھی سے

ہم آہنگی سے ہے محفل جہاں کی
اسی سے ہے بہار اس بوستاں کی

لب پہ آتی ہے دعا بن کے تمنا ميری

لب پہ آتی ہے دعا بن کے تمنا ميری
زندگی شمع کی صورت ہو خدايا ميری

دُور دنيا کا مرے دم سے اندھيرا ہو جائے
ہر جگہ ميرے چمکنے سے اُجالا ہو جائے

ہو مرے دم سے يونہی ميرے وطن کی زينت
جس طرح پھول سے ہوتی ہے چمن کی زينت

زندگی ہو مری پروانے کی صورت يا رب
علم کی شمع سے ہو مجھ کو محبت يا رب

ہو مرا کام غريبوں کی حمايت کرنا
دردمندوں سے ضعيفوں سے محبت کرنا

مرے اللہ! برائی سے بچانا مُجھ کو
نيک جو راہ ہو اس رہ پہ چلانا مجھ کو

ہزار خوف ہو لیکن زباں ہو دل کی رفیق

 

ہزار خوف ہو لیکن زباں ہو دل کی رفیق
یہی رہا ہے ازل سے قلندروں کا طریق

ہجوم کیوں ہے زیادہ شراب خانے میں
فقط یہ بات کہ پیر مغاں ہے مرد خلیق

علاج ضعف یقیں ان سے ہو نہیں سکتا
غریب اگرچہ ہیں رازیؔ کے نکتہ ہاے دقیق

مرید سادہ تو رو رو کے ہو گیا تائب
خدا کرے کہ ملے شیخ کو بھی یہ توفیق

اسی طلسم کہن میں اسیر ہے آدم
بغل میں اس کی ہیں اب تک بتان عہد عتیق

مرے لیے تو ہے اقرار بااللساں بھی بہت
ہزار شکر کہ ملا ہیں صاحب تصدیق

اگر ہو عشق تو ہے کفر بھی مسلمانی
نہ ہو تو مرد مسلماں بھی کافر و زندیق

جواب شکوہ

Allama Iqbal
Allama Iqbal

 

یہ کون غزل خواں ہے پرسوز و نشاط انگیز

یہ کون غزل خواں ہے پرسوز و نشاط انگیز
اندیشۂ دانا کو کرتا ہے جنوں آمیز

گو فقر بھی رکھتا ہے انداز ملوکانہ
ناپختہ ہے پرویزی بے سلطنت پرویز

اب حجرۂ صوفی میں وہ فقر نہیں باقی
خون دل شیراں ہو، جس فقر کی دستاویز

اے حلقۂ درویشاں وہ مرد خدا کیسا
ہو جس کے گریباں میں ہنگامۂ رستاخیز

جو ذکر کی گرمی سے شعلے کی طرح روشن
جو فکر کی سرعت میں بجلی سے زیادہ تیز

کرتی ہے ملوکیت آثار جنوں پیدا
اللہ کے نشتر ہیں تیمور ہو یا چنگیز

یوں داد سخن مجھ کو دیتے ہیں عراق و پارس
یہ کافر ہندی ہے بے تیغ و سناں خوں ریز

کھو نہ جا اس سحر و شام میں اے صاحب ہوش

کھو نہ جا اس سحر و شام میں اے صاحب ہوش
اک جہاں اور بھی ہے جس میں نہ فردا ہے نہ دوش

کس کو معلوم ہے ہنگامۂ فردا کا مقام
مسجد و مکتب و مے خانہ ہیں مدت سے خموش

میں نے پایا ہے اسے اشک سحرگاہی میں
جس در ناب سے خالی ہے صدف کی آغوش

نئی تہذیب تکلف کے سوا کچھ بھی نہیں
چہرہ روشن ہو تو کیا حاجت گلگونہ فروش

صاحب ساز کو لازم ہے کہ غافل نہ رہے
گاہے گاہے غلط آہنگ بھی ہوتا ہے سروش

ضمیر لالہ مۂ لعل سے ہوا لبریز

ضمیر لالہ مۂ لعل سے ہوا لبریز
اشارہ پاتے ہی صوفی نے توڑ دی پرہیز

بچھائی ہے جو کہیں عشق نے بساط اپنی
کیا ہے اس نے فقیروں کو وارث پرویز

پرانے ہیں یہ ستارے فلک بھی فرسودہ
جہاں وہ چاہیئے مجھ کو کہ ہو ابھی نوخیز

کسے خبر ہے کہ ہنگامۂ نشور ہے کیا
تری نگاہ کی گردش ہے میری رستاخیز

نہ چھین لذت آہ سحرگہی مجھ سے
نہ کر نگہ سے تغافل کو التفات آمیز

دل غمیں کے موافق نہیں ہے موسم گل
صدائے مرغ چمن ہے بہت نشاط انگیز

حدیث بے خبراں ہے تو با زمانہ بساز
زمانہ با تو نہ سازد تو با زمانہ ستیز

افلاک سے آتا ہے نالوں کا جواب آخر

افلاک سے آتا ہے نالوں کا جواب آخر
کرتے ہیں خطاب آخر اٹھتے ہیں حجاب آخر

احوال محبت میں کچھ فرق نہیں ایسا
سوز و تب و تاب اول سوز و تب و تاب آخر

میں تجھ کو بتاتا ہوں تقدیر امم کیا ہے
شمشیر و سناں اول طاؤس و رباب آخر

مے خانۂ یورپ کے دستور نرالے ہیں
لاتے ہیں سرور اول دیتے ہیں شراب آخر

کیا دبدبۂ نادر کیا شوکت تیموری
ہو جاتے ہیں سب دفتر غرق مے ناب آخر

خلوت کی گھڑی گزری جلوت کی گھڑی آئی
چھٹنے کو ہے بجلی سے آغوش سحاب آخر

تھا ضبط بہت مشکل اس سیل معانی کا
کہہ ڈالے قلندر نے اسرار کتاب آخر

تو ابھی رہ گزر میں ہے قید_مقام سے گزر

تو ابھی رہ گزر میں ہے قید_مقام سے گزر
مصر و حجاز سے گزر پارس و شام سے گزر

جس کا عمل ہے بے غرض اس کی جزا کچھ اور ہے
حور و خیام سے گزر بادہ و جام سے گزر

گرچہ ہے دل کشا بہت حسن فرنگ کی بہار
طائرک بلند بام دانہ و دام سے گزر

کوہ شگاف تیری ضرب تجھ سے کشاد شرق و غرب
تیغ ہلال کی طرح عیش نیام سے گزر

تیرا امام بے حضور تیری نماز بے سرور
ایسی نماز سے گزر ایسے امام سے گزر

کریں گے اہل نظر تازہ بستیاں آباد

 

کریں گے اہل نظر تازہ بستیاں آباد
مری نگاہ نہیں سوئے کوفہ و بغداد

یہ مدرسہ یہ جواں یہ سرور و رعنائی
انہیں کے دم سے ہے مے خانۂ فرنگ آباد

نہ فلسفی سے نہ ملا سے ہے غرض مجھ کو
یہ دل کی موت وہ اندیشہ و نظر کا فساد

فقیہہ شہر کی تحقیر کیا مجال مری
مگر یہ بات کہ میں ڈھونڈتا ہوں دل کی کشاد

خرید سکتے ہیں دنیا میں عشرت پرویز
خدا کی دین ہے سرمایۂ غم فرہاد

کئے ہیں فاش رموز قلندری میں نے
کہ فکر مدرسہ و خانقاہ ہو آزاد

رشی کے فاقوں سے ٹوٹا نہ برہمن کا طلسم
عصا نہ ہو تو کلیمیؑ ہے کار بے بنیاد

اثر کرے نہ کرے سن تو لے مری فریاد

 

اثر کرے نہ کرے سن تو لے مری فریاد
نہیں ہے داد کا طالب یہ بندۂ آزاد

یہ مشت خاک یہ صرصر یہ وسعت افلاک
کرم ہے یا کہ ستم تیری لذت ایجاد

ٹھہر سکا نہ ہوائے چمن میں خیمۂ گل
یہی ہے فصل بہاری یہی ہے باد مراد

قصوروار غریب الدیار ہوں لیکن
ترا خرابہ فرشتے نہ کر سکے آباد

مری جفا طلبی کو دعائیں دیتا ہے
وہ دشت سادہ وہ تیرا جہان بے بنیاد

خطر پسند طبیعت کو سازگار نہیں
وہ گلستاں کہ جہاں گھات میں نہ ہو صیاد

مقام شوق ترے قدسیوں کے بس کا نہیں
انہیں کا کام ہے یہ جن کے حوصلے ہیں زیاد

یہ حوریان فرنگی دل و نظر کا حجاب

یہ حوریان فرنگی دل و نظر کا حجاب
بہشت مغربیاں جلوہ ہائے پا برکاب

دل و نظر کا سفینہ سنبھال کر لے جا
مہ و ستارہ ہیں بحر وجود میں گرداب

جہان صوت و صدا میں سما نہیں سکتی
لطیفۂ ازلی ہے فغان چنگ و رباب

سکھا دیے ہیں اسے شیوہ ہائے خانقہی
فقیہ شہر کو صوفی نے کر دیا ہے خراب

وہ سجدہ روح زمیں جس سے کانپ جاتی تھی
اسی کو آج ترستے ہیں منبر و محراب

سنی نہ مصر و فلسطیں میں وہ اذاں میں نے
دیا تھا جس نے پہاڑوں کو رعشۂ سیماب

ہوائے قرطبہ شاید یہ ہے اثر تیرا
مری نوا میں ہے سوز و سرور عہد شباب

مجھے آہ و فغان نیم شب کا پھر پیام آیا

مجھے آہ و فغان نیم شب کا پھر پیام آیا
تھم اے رہرو کہ شاید پھر کوئی مشکل مقام آیا

ذرا تقدیر کی گہرائیوں میں ڈوب جا تو بھی
کہ اس جنگاہ سے میں بن کے تیغ بے نیام آیا

یہ مصرع لکھ دیا کس شوخ نے محراب مسجد پر
یہ ناداں گر گئے سجدوں میں جب وقت قیام آیا

چل اے میری غریبی کا تماشا دیکھنے والے
وہ محفل اٹھ گئی جس دم تو مجھ تک دور جام آیا

دیا اقبالؔ نے ہندی مسلمانوں کو سوز اپنا
یہ اک مرد تن آساں تھا تن آسانوں کے کام آیا

اسی اقبالؔ کی میں جستجو کرتا رہا برسوں
بڑی مدت کے بعد آخر وہ شاہیں زیر دام آیا

مسلماں کے لہو میں ہے سلیقہ دل نوازی کا

مسلماں کے لہو میں ہے سلیقہ دل نوازی کا
مروت حسن عالم گیر ہے مردان غازی کا

شکایت ہے مجھے یا رب خداوندان مکتب سے
سبق شاہیں بچوں کو دے رہے ہیں خاک بازی کا

بہت مدت کے نخچیروں کا انداز نگہ بدلا
کہ میں نے فاش کر ڈالا طریقہ شاہبازی کا

قلندر جز دو حرف لا الٰہ کچھ بھی نہیں رکھتا
فقیہ شہر قاروں ہے لغت ہائے حجازی کا

حدیث بادہ و مینا و جام آتی نہیں مجھ کو
نہ کر خاراشگافوں سے تقاضا شیشہ سازی کا

کہاں سے تو نے اے اقبالؔ سیکھی ہے یہ درویشی
کہ چرچا پادشاہوں میں ہے تیری بے نیازی کا

شعور و ہوش و خرد کا معاملہ ہے عجیب

شعور و ہوش و خرد کا معاملہ ہے عجیب
مقام شوق میں ہیں سب دل و نظر کے رقیب

میں جانتا ہوں جماعت کا حشر کیا ہوگا
مسائل نظری میں الجھ گیا ہے خطیب

اگرچہ میرے نشیمن کا کر رہا ہے طواف
مری نوا میں نہیں طائر چمن کا نصیب

سنا ہے میں نے سخن رس ہے ترک عثمانی
سنائے کون اسے اقبالؔ کا یہ شعر غریب

سمجھ رہے ہیں وہ یورپ کو ہم جوار اپنا
ستارے جن کے نشیمن سے ہیں زیادہ قریب

ہر اک مقام سے آگے گزر گیا مہ نو

 

ہر اک مقام سے آگے گزر گیا مہ نو
کمال کس کو میسر ہوا ہے بے تگ و دو

نفس کے زور سے وہ غنچہ وا ہوا بھی تو کیا
جسے نصیب نہیں آفتاب کا پرتو

نگاہ پاک ہے تیری تو پاک ہے دل بھی
کہ دل کو حق نے کیا ہے نگاہ کا پیرو

پنپ سکا نہ خیاباں میں لالۂ دل سوز
کہ سازگار نہیں یہ جہان گندم و جو

رہے نہ ایبکؔ و غوریؔ کے معرکے باقی
ہمیشہ تازہ و شیریں ہے نغمۂ خسروؔ

اگر کج رو ہیں انجم آسماں تیرا ہے یا میرا

اگر کج رو ہیں انجم آسماں تیرا ہے یا میرا
مجھے فکر جہاں کیوں ہو جہاں تیرا ہے یا میرا

اگر ہنگامہ ہائے شوق سے ہے لا مکاں خالی
خطا کس کی ہے یا رب لا مکاں تیرا ہے یا میرا

اسے صبح ازل انکار کی جرأت ہوئی کیوں کر
مجھے معلوم کیا وہ رازداں تیرا ہے یا میرا

محمد بھی ترا جبریل بھی قرآن بھی تیرا
مگر یہ حرف شیریں ترجماں تیرا ہے یا میرا

اسی کوکب کی تابانی سے ہے تیرا جہاں روشن
زوال آدم خاکی زیاں تیرا ہے یا میرا

سما سکتا نہیں پہنائے فطرت میں مرا سودا

سما سکتا نہیں پہنائے فطرت میں مرا سودا
غلط تھا اے جنوں شاید ترا اندازۂ صحرا

خودی سے اس طلسم رنگ و بو کو توڑ سکتے ہیں
یہی توحید تھی جس کو نہ تو سمجھا نہ میں سمجھا

نگہ پیدا کر اے غافل تجلی عین فطرت ہے
کہ اپنی موج سے بیگانہ رہ سکتا نہیں دریا

رقابت علم و عرفاں میں غلط بینی ہے منبر کی
کہ وہ حلاج کی سولی کو سمجھا ہے رقیب اپنا

خدا کے پاک بندوں کو حکومت میں غلامی میں
زرہ کوئی اگر محفوظ رکھتی ہے تو استغنا

نہ کر تقلید اے جبریل میرے جذب و مستی کی
تن آساں عرشیوں کو ذکر و تسبیح و طواف اولیٰ

بہت دیکھے ہیں میں نے مشرق و مغرب کے مے خانے
یہاں ساقی نہیں پیدا وہاں بے ذوق ہے صہبا

نہ ایراں میں رہے باقی نہ توراں میں رہے باقی
وہ بندے فقر تھا جن کا ہلاک قیصر و کسریٰ

یہی شیخ حرم ہے جو چرا کر بیچ کھاتا ہے
گلیم بو ذر و دلق اویس و چادر زہرا

حضور حق میں اسرافیل نے میری شکایت کی
یہ بندہ وقت سے پہلے قیامت کر نہ دے برپا

ندا آئی کہ آشوب قیامت سے یہ کیا کم ہے
گرفتہ چینیاں احرام و مکی خفتہ در بطحا

لبالب شیشۂ تہذیب حاضر ہے مے لا سے
مگر ساقی کے ہاتھوں میں نہیں پیمانۂ الا

دبا رکھا ہے اس کو زخمہ ور کی تیز دستی نے
بہت نیچے سروں میں ہے ابھی یورپ کا واویلا

اسی دریا سے اٹھتی ہے وہ موج تند جولاں بھی
نہنگوں کے نشیمن جس سے ہوتے ہیں تہ و بالا

غلامی کیا ہے؟ ذوق حسن و زیبائی سے محرومی
جسے زیبا کہیں آزاد بندے ہے وہی زیبا

بھروسا کر نہیں سکتے غلاموں کی بصیرت پر
کہ دنیا میں فقط مردان حر کی آنکھ ہے بینا

وہی ہے صاحب امروز جس نے اپنی ہمت سے
زمانے کے سمندر سے نکالا گوہر فردا

فرنگی شیشہ گر کے فن سے پتھر ہوگئے پانی
مری اکسیر نے شیشے کو بخشی سختی خارا

رہے ہیں اور ہیں فرعون میری گھات میں اب تک
مگر کیا غم کہ میری آستیں میں ہے ید بیضا

وہ چنگاری خس و خاشاک سے کس طرح دب جائے
جسے حق نے کیا ہو نیستاں کے واسطے پیدا

محبت خویشتن بینی محبت خویشتن داری
محبت آستان قیصر و کسریٰ سے بے پروا

عجب کیا گر مہ و پرویں مرے نخچیر ہو جائیں
کہ بر فتراک صاحب دولتے بستم سر خود را

وہ دانائے سبل ختم الرسل مولائے کل جس نے
غبار راہ کو بخشا فروغ وادی سینا

نگاہ عشق و مستی میں وہی اول وہی آخر
وہی قرآں وہی فرقاں وہی یٰسیں وہی طہٰ

سنائیؔ کے ادب سے میں نے غواصی نہ کی ورنہ
ابھی اس بحر میں باقی ہیں لاکھوں لولوئے لالا

جگنو کی روشنی ہے کاشانۂ چمن

جگنو کی روشنی ہے کاشانۂ چمن میں
یا شمع جل رہی ہے پھولوں کی انجمن میں؟
آیا ہے آسماں سے اُڑ کر کوئی ستارہ
یا جان پڑ گئی ہے مہتاب کی کرن میں؟
یا شب کی سلطنت میں دن کا سفر آیا؟
غربت میں آ کے چمکا گمنام تھا وطن میں
تکمہ کوئی گرا ہے مہتاب کی قبا کا؟
ذرہ ہے یا نمایاں سورج کے پیرہن میں؟

بنگر کہ جوئے آب چہ مستانہ می رود
مانندِ کہکشاں برگیبانِ مرغزار
در خوابِ ناز بود بہ گہوارۂ سحاب
وا کرد چشمِ شوق بہ آغوشِ کوہسارا
ز سنگ ریزہ نغمہ کشاید خرامِ او
سیمائے او چو آئینہ بے رنگ و بے غبار

نگاہ فقر میں شان سکندری کیا ہے

نگاہ فقر میں شان سکندری کیا ہے
خراج کی جو گدا ہو ، وہ قیصری کیا ہے!

بتوں سے تجھ کو امیدیں ، خدا سے نومیدی
مجھے بتا تو سہی اور کافری کیا ہے!

فلک نے ان کو عطا کی ہے خواجگی کہ جنھیں
خبر نہیں روش بندہ پروری کیا ہے

فقط نگاہ سے ہوتا ہے فیصلہ دل کا
نہ ہو نگاہ میں شوخی تو دلبری کیا ہے

اسی خطا سے عتاب ملوک ہے مجھ پر
کہ جانتا ہوں مآل سکندری کیا ہے

کسے نہیں ہے تمنائے سروری ، لیکن
خودی کی موت ہو جس میں وہ سروری کیا ہے!

خوش آ گئی ہے جہاں کو قلندری میری
وگرنہ شعر مرا کیا ہے ، شاعری کیا ہے!

توحید

مردوکوزندہ جانتا ھے آزری نظام
وھاں کے بتکدے اور خانقاہ جات

__________

Allama Iqbal Poems in English

 

Shor Hai Ho Gaye Duniya Se Musalman Nabood

Shor Hai Ho Gaye Duniya Se Musalman Nabood
Hum Yeh Kehte Hein Keh Thein Bhi Kahin Muslim Mojod

Wazza Mein Tum Ho Nasraa Tou Tamad-Dan Mein Hanood
Yeh Musalman Hein Jinhein Dekh Ke Sharmaein Yahood

Youn Tou Syed Bhi Ho, Mirza Bhi Ho, Afghan Bhi Ho
Tum Sab He Kuch Ho Batao Musalman Bhi Ho?

Goongi Ho Gai Aaj Kuch Zaban Kehte Kehte

Goongi Ho Gai Aaj Kuch Zaban Kehte Kehte
Hich-Kichaya Main Khud Ko Musalman Kehte Kehte

Yeh Baat Nahi, Mujh Ko Rab Per Yaqin Nahi
Bad Darr Gaya Khud Ko Sahib-E-Iman Kehte Kehte

Tofeeq Na Hoi Mujh Ko Ek Waqt Ki Namaz Ki
Aur Chup Howa Moazin Azaan Kehte Kehte

Ksi Kafir Ne Jo Pocha Yeh Kya Hai Mahina
Hath Se Pani Gir Gaya Ramzan Kehte Kehte

Meri Almari Mein Gard Se Atti Kitab Ka Jo Pocha
Main Gadh Gaya Zamin Mein Quran Kehte Kehte

Yeh Sun Ke Chup Sadh Li Iqbal Us Ne
Youn Laga Ruk Gaya Woh Mujhe Hewan Kehte Kehte

Zindagi Insaan Ki Aik Dam Ke Siwa Kuch Bhi Nahi

Zindagi Insaan Ki Aik Dam Ke Siwa Kuch Bhi Nahi
Dam Hawa Ki Mouj Hai, Ram Ke Siwa Kuch Bhi Nahi

Gull, Tabasum Keh Raha Tha Zindagani Ko, Magar
Shama Boli, Garyae Gham Ke Siwa Kuch Bhi Nahi

Raaz-E-Hasti Raaz Hai Jab Tak Koi Mehram Na Ho
Khol Gaya Jis Dam, Tou Mehram Ke Siwa Kuch Bhi Nahi

Zaeran-E Kaba Se Iqbal Ye Pochey Koi
Kya Haram Ka Tuhfa Zam-Zam Ke Siwa Kuch Bhi Nahi

Sitaron Se Aage Jahan Aur Bhi Hain

Sitaron Se Aage Jahan Aur Bhi Hain
Abhi Ishq Ke Imtehan Aur Bhi Hain

Tahi Zindagi Se Nahi Ye Fezaein
Yahan Saekron Karwan Aur Bhi Hain

Qana-At Na Kar Aalam-E-Rang-O-Bu Per
Chaman Aur Bhi Aashyan Aur Bhi Hain

Agar Kho Gaya Aik Nasheman Tou Kya Gham
Maqamat-E-Aah-Wa-Fagha Aur Bhi Hain

Tu Shaheen Hai Parwaz Hai Kaam Tera
Tere Samne Asman Aur Bhi Hain

Esi Roz-O-Shab Mein Ulajh Kar Na Reh Ja
Ke Tere Zaman-O-Makan Aur Bhi Hain

Gae Din Ke Tanha Tha Main Anjuman Mein
Yahan Ab Mere Raaz-Dan Aur Bhi Hain

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *