Ahmad Faraz

Ahmad Faraz

Ahmad Faraz
Ahmad Faraz

January 12 1931
August 25 2008

Ahmad Faraz (احمد فراز‬‎) Was Best Urdu Poet His Pen Name Was Faraz Full Name Was Syed Ahmed Shah But He Is Known As Ahmad Faraz. He Was Also Known As Modern Poet Because He Was The Best Poet Of The Century. Faraz Was Born In Kohat Kpk On 12 January 1931.He Was Awarded For Many Pakistani Civil Awards Which Was Hilal E Imtiaz , Sitara I Imtiaz, Hilal E Pakistan .Faraz Was Died In Islamabad Pakistan On 25 August 2008 Age Of 77 Years Old.

 

Ahmad Faraz Poetry

Zamano Se Dar Raha Hun Faraz

Ahmad FarazAhmad Faraz
Ahmad Faraz

Main Aane Wale Zamano Se Dar Raha Hun Faraz
Ke Main Ne Dekhi Hain Aankhen Udas Logo Ki

Aankh Se Door Na Ho

Aankh Se Door Na Ho Dil Se Utar Jaye Ga
Waqt Ka Kya Hai Guzarta Hai Guzar Jaye Ga

Mere Sabr Ki Intiha Kia Pochte Ho Faraz

Mere Sabr Ki Intiha Kia Pochte Ho Faraz
Wo Muj Se Lipat Ke Roya Kisi Aur Ke Liye

Log Pathar Ke Buton Ko Poj Kar Bi Masoom Rahe Faraz

Log Pathar Ke Buton Ko Poj Kar Bi Masoom Rahe Faraz
Ham Ne Ik Insan Ko Chaha Aur Gunehgar Ho Gaye

Ab Tere Zikar Pe Ham Baat Badal Dete Hain

Ahmad Faraz
Ahmad Faraz

Ab Tere Zikar Pe Ham Baat Badal Dete Hain
Kitni Raghbat Thi Tere Naam Se Pehle Pehle

Ab To Hamain Bi Tark-e Mrasam Ka Dukh Nahi

Ab To Hamain Bi Tark-e Mrasam Ka Dukh Nahi
Par Dil Ye Chahta Hai Ke Aaghaz Tu Kare

Jo Zehar Pee Chuka Hun Tumhein Ne Muje Dia

Jo Zehar Pee Chuka Hun Tumhein Ne Muje Dia
Ab Tum Zindagi Ki Duaen Muje Na Do

Is Dunya Mai Kon Kre Wafa Kisi Se Faraz

Ahmad Faraz
Ahmad Faraz

Is Dunya Mai Kon Kre Wafa Kisi Se Faraz
Dil Ke Do Haroof Wo Bi Juda Juda

Zindagi Se Yehi Gila Hai Muje

Zindagi Se Yehi Gila Hai Muje
Tu Bohat Dair Se Mila Hai Muje

Rooth Janay Ki Ada Ham Ko Bi Ati Hay

Rooth Janay Ki Ada Ham Ko Bi Ati Hay
Kash Hota Koi Ham Ko Bi Mnane Wala

Kon Preshan Hota Hai Tere Gham Se Faraz

Kon Preshan Hota Hai Tere Gham Se Faraz
Wo Apni Hi Kisi Baat Pe Roya Ho Ga

Koi Khamosh Ho Jaye Tu Ham Tarap Jate Hain Faraz

Ahmad Faraz
Ahmad Faraz

Koi Khamosh Ho Jaye Tu Ham Tarap Jate Hain Faraz
Ham Khamosh Hoye Tu Kisi Ne Haal Tak Na Pocha

Ye Koi Tum Sa Hai Ke Tum Ho

Jis Simat Bhi Dekhon Nazar Aata Hai Ke Tum Ho
Ae Jan-e Jahan Ye Koi Tum Sa Hai Ke Tum Ho

Kisi Se Juda Hona Agar Itna Asan Hota Faraz

Kisi Se Juda Hona Agar Itna Asan Hota Faraz
Tu Jism Se Roh Ko Lene Kabi Farishte Nahi Aate

Shayad Tu Kabi Pyasa Meri Tarf Lot Aye Faraz

Shayad Tu Kabi Pyasa Meri Tarf Lot Aye Faraz
Aankhon Mein Liye Phirta Hon Darya Teri Khatir

Dost Ban Kar Bhi Nahi Sath Nibahne Wala

Ahmad FarazAhmad Faraz
Ahmad Faraz

Dost Ban Kar Bhi Nahi Sath Nibahne Wala
Wohi Andaaz Hai Zalam Ka Zamane Wala

Tu Saamne Hai Tu Phir Kyn Yaqeen Nahi Aata

Tu Saamne Hai Tu Phir Kyn Yaqeen Nahi Aata
Ye Bar Bar Jo Aankhon Ko Mal Ke Dekhte Hain

Is Se Pehle Keh BeWafa Ho Jayen

Is Se Pehle Keh BeWafa Ho Jayen
Kyun Na Ae Dost Ham Juda Ho Jayen

Aesi Tareekyan Aankhon Mein Basi Hai Ke Faraz

Aesi Tareekyan Aankhon Mein Basi Hai Ke Faraz
Raat Tu Raat Hai Ham Din Ko Jalate Hain Chiragh

Muje Se Kehti Hai Tere Sath Rahon Gi Faraz

Muje Se Kehti Hai Tere Sath Rahon Gi Faraz
Bohat Pyar Karti Hai Muj Se Udasi Meri

Ab Aur Kya Kisi Se Marasam Barhyen Ham

Ahmad Faraz
Ahmad Faraz

Ab Aur Kya Kisi Se Marasam Barhyen Ham
Ye Bhi Bohat Hai Tuj Ko Agar Bhol Jayen Ham

Tere Hote Hoye Aa Jati Thi Sari Dunya

Tere Hote Hoye Aa Jati Thi Sari Dunya
Aaj Tanha Hun Tu Koi Nahi Aane Wala

Muntazir Kis Ka Hun Toti Hoyi Dehleez Pey Mein

Muntazir Kis Ka Hun Toti Hoyi Dehleez Pey Mein
Kon Aye Ga Yahan Ko Hai Aane Wala

Kisi Bewafa Ki Khatar Ye Junon Faraz Kab Tak

Kisi Bewafa Ki Khatar Ye Junon Faraz Kab Tak
Ju Tumhain Bhol Chuka Hai Usay Tum Bi Bhol Jao

Hera Bna Dia Ham Ne Faraz

Ahmad Faraz
Ahmad Faraz

Usay Trash K Heera Bana Dia Ham Ne Faraz
Magar Ab Ye Sochte Hain Usay Khredain Kesay

Guftagu Achi Lagi Zoq-e Nazar Acha Laga

Guftagu Achi Lagi Zoq-e Nazar Acha Laga
Mudaton Ke Ba’ad Koi Hamsafar Acha Laga

Ik Pal Mai Jo Barbad Kar Dete Hain Dil Ki Basti Ko Faraz

Ik Pal Mai Jo Barbad Kar Dete Hain Dil Ki Basti Ko Faraz
Wo Log Dekhne Mai Aksar Masom Hote Hain

Dil Ka Dukh Jana Tu Dil Ka Masla Hai

Dil Ka Dukh Jana Tu Dil Ka Masla Hai
Us Ka Hans Dena Hamare Hal Par Acha Laga

Dil Ko Teri Chahat Pe Bhrosa Bhi Bohat Hai

Ahmad Faraz
Ahmad Faraz

Dil Ko Teri Chahat Pe Bharosa Bhi Bohat Hai
Aur Tujh Se Bichar Jane Ka Dard Bhi Nahi Jata

Us Ki Aankhon Ko Kabi Ghor Se Dekha Hai Faraz

Us Ki Aankhon Ko Kabi Ghor Se Dekha Hai Faraz
Rone Walon Ki Tarah Jagne Walon Jesi

Ab Tak Dil-e Khush Fahm Ko Tuj Se Hain Umeedain

Ab Tak Dil-e Khush Fahm Ko Tuj Se Hain Umeedain
Ye Aakhri Shama Bhi Bhujane Ke Liye Aa

Pyar or Mohabat Us Door Ki Baat Hai Faraz

Pyar or Mohabat Us Door Ki Baat Hai Faraz
Jab Makan Kachay Or Log Sachy Hoa Karte Thay

Wo Zindagi Ho Ke Dunya Faraz Kia Ki jiye

Wo Zindagi Ho Ke Dunya Faraz Kia Ki jiye
Keh Jis Se Ishq Kro Bewafa Nikalti Hai

Mujhse Har Bar wo Nazren Chura Leta Hai Faraz

Ahmad Faraz
Ahmad Faraz

Mujhse Har Bar Wo Nazrein Chura Leta Hai Faraz
Maine Kaghaz Pe Bhi Bana Ke Dekhi Hain Ankhein Uski

Main Shab Ka Bi Mujrim Hoon Sehr Ka Bi Hoon Mujrim

Main Shab Ka Bi Mujrim Hoon Sehr Ka Bi Hoon Mujrim
Yaroo Muje Is Shehr Ke Aadab Sikha Do

Ham Chiraghon Ko Tu Tareeki Se Larna Hai Faraz

Ham Chiraghon Ko Tu Tareeki Se Larna Hai Faraz
Gul hoye Par Subah Ke Aasar Ban Jayen Gay Ham

Muhabat Ke Bad Muhabat Mumkin Hai Faraz

Muhabat Ke Bad Muhabat Mumkin Hai Faraz
Par Toot Ke Chahna Sirf Aik Bar Hota Hai

Ye Kanayat Hai Itayat Hai Keh Chahat Hai Faraz

Ahmad Faraz
Ahmad Faraz

Ye Qinaaat Hai Itayat Hai Ke Chahat Hai Faraz
Ham Tu Razi Hain Wo Jis Hal Main Jesa Rakhe

Suna Hai Zindagi Imtihan Leti Hai Faraz

Suna Hai Zindagi Imtihan Leti Hai Faraz
Par Yahan Tu Imtihanon Ne Zindagi Le Li

Jee Tu Karta Hai Usay Muft Main Jaan Day Doon

Jee Tu Karta Hai Usay Muft Main Jaan Day Doon
Faraz Itnay Masoom Khridar Se Kiya Lena Dena

Mohabbat Kar Sakte Ho To Khuda Se Karo Faraz

Mohabbat Kar Sakte Ho To Khuda Se Karo Faraz
Mitti Ke Khilonon Se Kabhi Wafa Nahi Milti

Zindagi se ham kuch udhar nahi lete faraz

Ahmad Faraz
Ahmad Faraz

Zindagi se hum kuch udhar nahi lete faraz
Kafan bhi lete hain to zindagi de kar

______________________

Ahmad Faraz Poems 

 

کسی جانب سے بھی پرچم نہ لہو کا نکلا

کسی جانب سے بھی پرچم نہ لہو کا نکلا
اب کے موسم میں بھی عالم وہی ہو کا نکلا

دست قاتل سے کچھ امید شفا تھی لیکن
نوک خنجر سے بھی کانٹا نہ گلو کا نکلا

عشق الزام لگاتا تھا ہوس پر کیا کیا
یہ منافق بھی ترے وصل کا بھوکا نکلا

جی نہیں چاہتا مے خانے کو جائیں جب سے
شیخ بھی بزم نشیں اہل سبو کا نکلا

دل کو ہم چھوڑ کے دنیا کی طرف آئے تھے
یہ شبستاں بھی اسی غالیہ مو کا نکلا

ہم عبث سوزن و رشتہ لیے گلیوں میں پھرے
کسی دل میں نہ کوئی کام رفو کا نکلا

یار بے فیض سے کیوں ہم کو توقع تھی فرازؔ
جو نہ اپنا نہ ہمارا نہ عدو کا نکلا

گفتگو اچھی لگی ذوق نظر اچھا لگا

گفتگو اچھی لگی ذوق نظر اچھا لگا
مدتوں کے بعد کوئی ہم سفر اچھا لگا

دل کا دکھ جانا تو دل کا مسئلہ ہے پر ہمیں
اس کا ہنس دینا ہمارے حال پر اچھا لگا

ہر طرح کی بے سر و سامانیوں کے باوجود
آج وہ آیا تو مجھ کو اپنا گھر اچھا لگا

باغباں گلچیں کو چاہے جو کہے ہم کو تو پھول
شاخ سے بڑھ کر کف دل دار پر اچھا لگا

کوئی مقتل میں نہ پہنچا کون ظالم تھا جسے
تیغ قاتل سے زیادہ اپنا سر اچھا لگا

ہم بھی قائل ہیں وفا میں استواری کے مگر
کوئی پوچھے کون کس کو عمر بھر اچھا لگا

اپنی اپنی چاہتیں ہیں لوگ اب جو بھی کہیں
اک پری پیکر کو اک آشفتہ سر اچھا لگا

میرؔ کے مانند اکثر زیست کرتا تھا فرازؔ
تھا تو وہ دیوانہ سا شاعر مگر اچھا لگا

مزاج ہم سے زیادہ جدا نہ تھا اس کا

مزاج ہم سے زیادہ جدا نہ تھا اس کا
جب اپنے طور یہی تھے تو کیا گلہ اس کا

وہ اپنے زعم میں تھا بے خبر رہا مجھ سے
اسے گماں بھی نہیں میں نہیں رہا اس کا

وہ برق رو تھا مگر وہ گیا کہاں جانے
اب انتظار کریں گے شکستہ پا اس کا

چلو یہ سیل بلا خیز ہی بنے اپنا
سفینہ اس کا خدا اس کا ناخدا اس کا

یہ اہل درد بھی کس کی دہائی دیتے ہیں
وہ چپ بھی ہو تو زمانہ ہے ہم نوا اس کا

ہمیں نے ترک تعلق میں پہل کی کہ فرازؔ
وہ چاہتا تھا مگر حوصلہ نہ تھا اس کا

قامت کو تیرے سرو صنوبر نہیں کہا

قامت کو تیرے سرو صنوبر نہیں کہا
جیسا بھی تو تھا اس سے تو بڑھ کر نہیں کہا

اس سے ملے تو زعم تکلم کے باوجود
جو سوچ کر گئے وہی اکثر نہیں کہا

اتنی مروتیں تو کہاں دشمنوں میں تھیں
یاروں نے جو کہا مرے منہ پر نہیں کہا

مجھ سا گناہ گار سر دار کہہ گیا
واعظ نے جو سخن سر منبر نہیں کہا

برہم بس اس خطا پہ امیران شہر ہیں
ان جوہڑوں کو میں نے سمندر نہیں کہا

یہ لوگ میری فرد عمل دیکھتے ہیں کیوں
میں نے فرازؔ خود کو پیمبر نہیں کہا

قرب جاناں کا نہ مے خانے کا موسم آیا

قرب جاناں کا نہ مے خانے کا موسم آیا
پھر سے بے صرفہ اجڑ جانے کا موسم آیا

کنج غربت میں کبھی گوشۂ زنداں میں تھے ہم
جان جاں جب بھی ترے آنے کا موسم آیا

اب لہو رونے کی خواہش نہ لہو ہونے کی
دل زندہ ترے مر جانے کا موسم آیا

کوچۂ یار سے ہر فصل میں گزرے ہیں مگر
شاید اب جاں سے گزر جانے کا موسم آیا

کوئی زنجیر کوئی حرف خرد لے آیا
فصل گل آئی کہ دیوانے کا موسم آیا

سیل خوں شہر کی گلیوں میں در آیا ہے فرازؔ
اور تو خوش ہے کہ گھر جانے کا موسم آیا

قربت بھی نہیں دل سے اتر بھی نہیں جاتا

قربت بھی نہیں دل سے اتر بھی نہیں جاتا
وہ شخص کوئی فیصلہ کر بھی نہیں جاتا

آنکھیں ہیں کہ خالی نہیں رہتی ہیں لہو سے
اور زخم جدائی ہے کہ بھر بھی نہیں جاتا

وہ راحت جاں ہے مگر اس در بدری میں
ایسا ہے کہ اب دھیان ادھر بھی نہیں جاتا

ہم دوہری اذیت کے گرفتار مسافر
پاؤں بھی ہیں شل شوق سفر بھی نہیں جاتا

دل کو تری چاہت پہ بھروسہ بھی بہت ہے
اور تجھ سے بچھڑ جانے کا ڈر بھی نہیں جاتا

پاگل ہوئے جاتے ہو فرازؔ اس سے ملے کیا
اتنی سی خوشی سے کوئی مر بھی نہیں جاتا

کیوں ڈھونڈتا پھرتا ہے پینے کو تو شراب؟

کیوں ڈھونڈتا پھرتا ہے پینے کو تو شراب؟
حرام شے ہے یہ ! اسکی کوئی جگہ نہیں

حرام ہے وہ شے ! جو مدہوش کر دے زیدی
ہم تو ہوش سے بیٹھتے ہیں ساقی کی محفل میں

فقیہ شہر کی مجلس سے کچھ بھلا نہ ہوا

فقیہ شہر کی مجلس سے کچھ بھلا نہ ہوا
کہ اس سے مل کے مزاج اور کافرانہ ہوا

ابھی ابھی وہ ملا تھا ہزار باتیں کیں
ابھی ابھی وہ گیا ہے مگر زمانہ ہوا

وہ رات بھول چکو وہ سخن نہ دہراؤ
وہ رات خواب ہوئی وہ سخن فسانہ ہوا

کچھ اب کے ایسے کڑے تھے فراق کے موسم
تری ہی بات نہیں میں بھی کیا سے کیا نہ ہوا

ہجوم ایسا کہ راہیں نظر نہیں آتیں
نصیب ایسا کہ اب تک تو قافلہ نہ ہوا

شہید شب فقط احمد فرازؔ ہی تو نہیں
کہ جو چراغ بکف تھا وہی نشانہ ہوا

رنجش ہی سہی دل ہی دکھانے کے لیے آ

رنجش ہی سہی دل ہی دکھانے کے لیے آ
آ پھر سے مجھے چھوڑ کے جانے کے لیے آ

کچھ تو مرے پندار محبت کا بھرم رکھ
تو بھی تو کبھی مجھ کو منانے کے لیے آ

پہلے سے مراسم نہ سہی پھر بھی کبھی تو
رسم و رہ دنیا ہی نبھانے کے لیے آ

کس کس کو بتائیں گے جدائی کا سبب ہم
تو مجھ سے خفا ہے تو زمانے کے لیے آ

اک عمر سے ہوں لذت گریہ سے بھی محروم
اے راحت جاں مجھ کو رلانے کے لیے آ

اب تک دل خوش فہم کو تجھ سے ہیں امیدیں
یہ آخری شمعیں بھی بجھانے کے لیے آ

سوئے فلک نہ جانب مہتاب دیکھنا

سوئے فلک نہ جانب مہتاب دیکھنا
اس شہر دل نواز کے آداب دیکھنا

تجھ کو کہاں چھپائیں کہ دل پر گرفت ہو
آنکھوں کو کیا کریں کہ وہی خواب دیکھنا

وہ موج خوں اٹھی ہے کہ دیوار و در کہاں
اب کے فصیل شہر کو غرقاب دیکھنا

ان صورتوں کو ترسے گی چشم جہاں کہ آج
کمیاب ہیں تو کل ہمیں نایاب دیکھنا

پھر خون خلق و گردن مینا بچائیو
پر چل پڑا ہے ذکر مے ناب دیکھنا

آباد کوئے چاک گریباں جو پھر ہوا
دست رقیب و دامن احباب دیکھنا

ہم لے تو آئے ہیں تجھے اک بے دلی کے ساتھ
اس انجمن میں اے دل بیتاب دیکھنا

حد چاہئے فرازؔ وفا میں بھی اور تمہیں
غم دیکھنا نہ دل کی تب و تاب دیکھنا

عجب جنون مسافت میں گھر سے نکلا تھا

عجب جنون مسافت میں گھر سے نکلا تھا
خبر نہیں ہے کہ سورج کدھر سے نکلا تھا

یہ کون پھر سے انہیں راستوں میں چھوڑ گیا
ابھی ابھی تو عذاب سفر سے نکلا تھا

یہ تیر دل میں مگر بے سبب نہیں اترا
کوئی تو حرف لب چارہ گر سے نکلا تھا

یہ اب جو آگ بنا شہر شہر پھیلا ہے
یہی دھواں مرے دیوار و در سے نکلا تھا

میں رات ٹوٹ کے رویا تو چین سے سویا
کہ دل کا زہر مری چشم تر سے نکلا تھا

یہ اب جو سر ہیں خمیدہ کلاہ کی خاطر
یہ عیب بھی تو ہم اہل ہنر سے نکلا تھا

وہ قیس اب جسے مجنوں پکارتے ہیں فرازؔ
تری طرح کوئی دیوانہ گھر سے نکلا تھا

خود کو ترے معیار سے گھٹ کر نہیں دیکھا

خود کو ترے معیار سے گھٹ کر نہیں دیکھا
جو چھوڑ گیا اس کو پلٹ کر نہیں دیکھا

میری طرح تو نے شب ہجراں نہیں کاٹی
میری طرح اس تیغ پہ کٹ کر نہیں دیکھا

تو دشنۂ نفرت ہی کو لہراتا رہا ہے
تو نے کبھی دشمن سے لپٹ کر نہیں دیکھا

تھے کوچۂ جاناں سے پرے بھی کئی منظر
دل نے کبھی اس راہ سے ہٹ کر نہیں دیکھا

اب یاد نہیں مجھ کو فرازؔ اپنا بھی پیکر
جس روز سے بکھرا ہوں سمٹ کر نہیں دیکھا

دل منافق تھا شب ہجر میں سویا کیسا

دل منافق تھا شب ہجر میں سویا کیسا
اور جب تجھ سے ملا ٹوٹ کے رویا کیسا

زندگی میں بھی غزل ہی کا قرینہ رکھا
خواب در خواب ترے غم کو پرویا کیسا

اب تو چہروں پہ بھی کتبوں کا گماں ہوتا ہے
آنکھیں پتھرائی ہوئی ہیں لب گویا کیسا

دیکھ اب قرب کا موسم بھی نہ سرسبز لگے
ہجر ہی ہجر مراسم میں سمویا کیسا

ایک آنسو تھا کہ دریائے ندامت تھا فرازؔ
دل سے بیباک شناور کو ڈبویا کیسا

دوست بن کر بھی نہیں ساتھ نبھانے والا

دوست بن کر بھی نہیں ساتھ نبھانے والا
وہی انداز ہے ظالم کا زمانے والا

اب اسے لوگ سمجھتے ہیں گرفتار مرا
سخت نادم ہے مجھے دام میں لانے والا

صبح دم چھوڑ گیا نکہت گل کی صورت
رات کو غنچۂ دل میں سمٹ آنے والا

کیا کہیں کتنے مراسم تھے ہمارے اس سے
وہ جو اک شخص ہے منہ پھیر کے جانے والا

تیرے ہوتے ہوئے آ جاتی تھی ساری دنیا
آج تنہا ہوں تو کوئی نہیں آنے والا

منتظر کس کا ہوں ٹوٹی ہوئی دہلیز پہ میں
کون آئے گا یہاں کون ہے آنے والا

کیا خبر تھی جو مری جاں میں گھلا ہے اتنا
ہے وہی مجھ کو سر دار بھی لانے والا

میں نے دیکھا ہے بہاروں میں چمن کو جلتے
ہے کوئی خواب کی تعبیر بتانے والا

تم تکلف کو بھی اخلاص سمجھتے ہو فرازؔ
دوست ہوتا نہیں ہر ہاتھ ملانے والا

جب یار نے رخت سفر باندھا کب ضبط کا پارا اس دن تھا

جب یار نے رخت سفر باندھا کب ضبط کا پارا اس دن تھا
ہر درد نے دل کو سہلایا کیا حال ہمارا اس دن تھا

جب خواب ہوئیں اس کی آنکھیں جب دھند ہوا اس کا چہرہ
ہر اشک ستارہ اس شب تھا ہر زخم انگارہ اس دن تھا

سب یاروں کے ہوتے سوتے ہم کس سے گلے مل کر روتے
کب گلیاں اپنی گلیاں تھیں کب شہر ہمارا اس دن تھا

جب تجھ سے ذرا غافل ٹھہرے ہر یاد نے دل پر دستک دی
جب لب پہ تمہارا نام نہ تھا ہر دکھ نے پکارا اس دن تھا

اک تم ہی فرازؔ نہ تھے تنہا اب کے تو بلا واجب آئی
اک بھیڑ لگی تھی مقتل میں ہر درد کا مارا اس دن تھا

جسم شعلہ ہے جبھی جامۂ سادہ پہنا

جسم شعلہ ہے جبھی جامۂ سادہ پہنا
میرے سورج نے بھی بادل کا لبادہ پہنا

سلوٹیں ہیں مرے چہرے پہ تو حیرت کیوں ہے
زندگی نے مجھے کچھ تم سے زیادہ پہنا

خواہشیں یوں ہی برہنہ ہوں تو جل بجھتی ہیں
اپنی چاہت کو کبھی کوئی ارادہ پہنا

یار خوش ہیں کہ انہیں جامۂ احرام ملا
لوگ ہنستے ہیں کہ قامت سے زیادہ پہنا

یار پیماں شکن آئے اگر اب کے تو اسے
کوئی زنجیر وفا اے شب وعدہ پہنا

غیرت عشق تو مانع تھی مگر میں نے فرازؔ
دوست کا طوق سر محفل اعدا پہنا

جو بھی درون دل ہے وہ باہر نہ آئے گا

جو بھی درون دل ہے وہ باہر نہ آئے گا
اب آگہی کا زہر زباں پر نہ آئے گا

اب کے بچھڑ کے اس کو ندامت تھی اس قدر
جی چاہتا بھی ہو تو پلٹ کر نہ آئے گا

یوں پھر رہا ہے کانچ کا پیکر لیے ہوئے
غافل کو یہ گماں ہے کہ پتھر نہ آئے گا

پھر بو رہا ہوں آج انہیں ساحلوں پہ پھول
پھر جیسے موج میں یہ سمندر نہ آئے گا

میں جاں بلب ہوں ترک تعلق کے زہر سے
وہ مطمئن کہ حرف تو اس پر نہ آئے گا

چل نکلتی ہیں غم یار سے باتیں کیا کیا

چل نکلتی ہیں غم یار سے باتیں کیا کیا
ہم نے بھی کیں در و دیوار سے باتیں کیا کیا

بات بن آئی ہے پھر سے کہ مرے بارے میں
اس نے پوچھیں مرے غم خوار سے باتیں کیا کیا

لوگ لب بستہ اگر ہوں تو نکل آتی ہیں
چپ کے پیرایۂ اظہار سے باتیں کیا کیا

کسی سودائی کا قصہ کسی ہرجائی کی بات
لوگ لے آتے ہیں بازار سے باتیں کیا کیا

ہم نے بھی دست شناسی کے بہانے کی ہیں
ہاتھ میں ہاتھ لیے پیار سے باتیں کیا کیا

کس کو بکنا تھا مگر خوش ہیں کہ اس حیلے سے
ہو گئیں اپنے خریدار سے باتیں کیا کیا

ہم ہیں خاموش کہ مجبور محبت تھے فرازؔ
ورنہ منسوب ہیں سرکار سے باتیں کیا کیا

آنکھ سے دور نہ ہو دل سے اتر جائے گا

آنکھ سے دور نہ ہو دل سے اتر جائے گا
وقت کا کیا ہے گزرتا ہے گزر جائے گا

اتنا مانوس نہ ہو خلوت غم سے اپنی
تو کبھی خود کو بھی دیکھے گا تو ڈر جائے گا

ڈوبتے ڈوبتے کشتی کو اچھالا دے دوں
میں نہیں کوئی تو ساحل پہ اتر جائے گا

زندگی تیری عطا ہے تو یہ جانے والا
تیری بخشش تری دہلیز پہ دھر جائے گا

ضبط لازم ہے مگر دکھ ہے قیامت کا فرازؔ
ظالم اب کے بھی نہ روئے گا تو مر جائے گا

سب لوگ لیے سنگ ملامت نکل آئے

سب لوگ لیے سنگ ملامت نکل آئے
کس شہر میں ہم اہل محبت نکل آئے

اب دل کی تمنا ہے تو اے کاش یہی ہو
آنسو کی جگہ آنکھ سے حسرت نکل آئے

ہر گھر کا دیا گل نہ کرو تم کہ نہ جانے
کس بام سے خورشید قیامت نکل آئے

جو درپے پندار ہیں ان قتل گہوں سے
جاں دے کے بھی سمجھو کہ سلامت نکل آئے

اے ہم نفسو کچھ تو کہو عہد ستم کی
اک حرف سے ممکن ہے حکایت نکل آئے

یارو مجھے مصلوب کرو تم کہ مرے بعد
شاید کہ تمہارا قد و قامت نکل آئے

سامنے اس کے کبھی اس کی ستائش نہیں کی

سامنے اس کے کبھی اس کی ستائش نہیں کی
دل نے چاہا بھی اگر ہونٹوں نے جنبش نہیں کی

اہل محفل پہ کب احوال کھلا ہے اپنا
میں بھی خاموش رہا اس نے بھی پرسش نہیں کی

جس قدر اس سے تعلق تھا چلے جاتا ہے
اس کا کیا رنج ہو جس کی کبھی خواہش نہیں کی

یہ بھی کیا کم ہے کہ دونوں کا بھرم قائم ہے
اس نے بخشش نہیں کی ہم نے گزارش نہیں کی

اک تو ہم کو ادب آداب نے پیاسا رکھا
اس پہ محفل میں صراحی نے بھی گردش نہیں کی

ہم کہ دکھ اوڑھ کے خلوت میں پڑے رہتے ہیں
ہم نے بازار میں زخموں کی نمائش نہیں کی

اے مرے ابر کرم دیکھ یہ ویرانۂ جاں
کیا کسی دشت پہ تو نے کبھی بارش نہیں کی

کٹ مرے اپنے قبیلے کی حفاظت کے لیے
مقتل شہر میں ٹھہرے رہے جنبش نہیں کی

وہ ہمیں بھول گیا ہو تو عجب کیا ہے فرازؔ
ہم نے بھی میل ملاقات کی کوشش نہیں کی

اس کو جدا ہوئے بھی زمانہ بہت ہوا

اس کو جدا ہوئے بھی زمانہ بہت ہوا
اب کیا کہیں یہ قصہ پرانا بہت ہوا

ڈھلتی نہ تھی کسی بھی جتن سے شب فراق
اے مرگ ناگہاں ترا آنا بہت ہوا

ہم خلد سے نکل تو گئے ہیں پر اے خدا
اتنے سے واقعے کا فسانہ بہت ہوا

اب ہم ہیں اور سارے زمانے کی دشمنی
اس سے ذرا سا ربط بڑھانا بہت ہوا

اب کیوں نہ زندگی پہ محبت کو وار دیں
اس عاشقی میں جان سے جانا بہت ہوا

اب تک تو دل کا دل سے تعارف نہ ہو سکا
مانا کہ اس سے ملنا ملانا بہت ہوا

کیا کیا نہ ہم خراب ہوئے ہیں مگر یہ دل
اے یاد یار تیرا ٹھکانہ بہت ہوا

کہتا تھا ناصحوں سے مرے منہ نہ آئیو
پھر کیا تھا ایک ہو کا بہانہ بہت ہوا

لو پھر ترے لبوں پہ اسی بے وفا کا ذکر
احمد فرازؔ تجھ سے کہا نہ بہت ہوا

اس کا اپنا ہی کرشمہ ہے فسوں ہے یوں ہے

اس کا اپنا ہی کرشمہ ہے فسوں ہے یوں ہے
یوں تو کہنے کو سبھی کہتے ہیں یوں ہے یوں ہے

جیسے کوئی در دل پر ہو ستادہ کب سے
ایک سایہ نہ دروں ہے نہ بروں ہے یوں ہے

تم نے دیکھی ہی نہیں دشت وفا کی تصویر
نوک ہر خار پہ اک قطرۂ خوں ہے یوں ہے

تم محبت میں کہاں سود و زیاں لے آئے
عشق کا نام خرد ہے نہ جنوں ہے یوں ہے

اب تم آئے ہو مری جان تماشا کرنے
اب تو دریا میں تلاطم نہ سکوں ہے یوں ہے

ناصحا تجھ کو خبر کیا کہ محبت کیا ہے
روز آ جاتا ہے سمجھاتا ہے یوں ہے یوں ہے

شاعری تازہ زمانوں کی ہے معمار فرازؔ
یہ بھی اک سلسلۂ کن فیکوں ہے یوں ہے

اس نے سکوت شب میں بھی اپنا پیام رکھ دیا

اس نے سکوت شب میں بھی اپنا پیام رکھ دیا
ہجر کی رات بام پر ماہ تمام رکھ دیا

آمد دوست کی نوید کوئے وفا میں عام تھی
میں نے بھی اک چراغ سا دل سر شام رکھ دیا

شدت تشنگی میں بھی غیرت مے کشی رہی
اس نے جو پھیر لی نظر میں نے بھی جام رکھ دیا

اس نے نظر نظر میں ہی ایسے بھلے سخن کہے
میں نے تو اس کے پاؤں میں سارا کلام رکھ دیا

دیکھو یہ میرے خواب تھے دیکھو یہ میرے زخم ہیں
میں نے تو سب حساب جاں بر سر عام رکھ دیا

اب کے بہار نے بھی کیں ایسی شرارتیں کہ بس
کبک دری کی چال میں تیرا خرام رکھ دیا

جو بھی ملا اسی کا دل حلقہ بگوش یار تھا
اس نے تو سارے شہر کو کر کے غلام رکھ دیا

اور فرازؔ چاہئیں کتنی محبتیں تجھے
ماؤں نے تیرے نام پر بچوں کا نام رکھ دیا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *